حضرت بل بٹہ پورہ میں پانی نایاب

سرینگر// بٹہ پورہ امام اعظم کالونی لین حضرتبل میں گزشتہ دو ہفتوں سے پینے کے صاف پانی کی شدید قلت واقع ہونے سے مقامی آبادی کو شدید پریشانیوں کا سامناہے۔خصوصا رمضان المبارک کے متبرک ایام میں سحری و افطار کے اوقات لوگوں کو وضو کے لئے پانی کی ایک  بوند میسر نہیں ہوتی۔ حضرت بل سرینگر کے علاقہ بٹہ پورہ سے ملحقہ امام اعظم لین کے مقامی لوگوں کے مطابق ان کے علاقہ میں گزشتہ دو ہفتوں سے پینے کے صاف پانی کی شدید قلت واقع ہونے سے لوگوں کو کافی مشکلات درپیش ہیں۔بٹہ پورہ کے مقامی شہری محمد رمضان نے اس بارے میں بتایا کہ پینے کے صاف پانی کی قلت کی وجہ سے لوگوں کو کافی مشکلات کا سامنا ہے اور اکثر لوگ ناصاف پانی کا استعمال کرنے پر مجبور ہورہے ہیں جس کے باعث لوگوں کو کئی طرح کی بیماریاں لگنے کا اندیشہ بڑھ گیا ہے۔اگرچہ اس سلسلے میں محکمہ جل شکتی کے متعلقہ حکام کی کئی بار اس جانب توجہ مبذول کرائی گئی تاہم انہوں نے ابھی تک اس جانب توجہ نہیں دی۔خصوصا رمضان المبارک کے دنوں میں پانی کی عدم دستیابی سے سحری اور افطار کے وقت کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہاہے۔ انہوں نے ایک بار پھر محکمہ جل شکتی کے اعلی حکام سے اپیل کی کہ وہ اس معاملے کی طرف توجہ دے اور علاقہ کیلئے پینے کے صاف پانی کی فراہمی کو یقینی بنائیں تاکہ لوگوں کو درپیش مشکلات سے نجات مل جائے ۔  
 
 
 

 

پینے کے پانی کی عدم دستیابی

بانڈی پورہ کے کئی علاقوں میں مشکلات درپیش

 
عازم جان
 
بانڈی پورہ//بانڈی پورہ کی وسیع آبادی ماہ رمضان کے دوران بھی پینے کے صاف پانی سے محروم ہے۔ ترکہ پورہ اور مگنی پورہ قوئل کے لوگوںنے بتایا کہ لگ بھگ دس ہزار نفوس پر مشتمل آبادی کوپینے کے صاف پانی کی عدم فراہمی کے نتیجے میں انہیں زبردست مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔انہوں نے بتایا کہ ترکہ پورہ کی پہاڈی پر کثیر رقم خرچ کرکے محکمہ جل شکتی نے پانی جمع کرنے کی ٹینکی تعمیر کی جو صاف پانی سپلائی کرنے میں ناکام ہے۔انہوںنے ڈپٹی کمشنر بانڈی پورہ اور لیفٹیننٹ گورنر منہاج سہنا سے مطالبہ کیاکہ وسیع آبادی کو ایام متبرکہ کے دوران پینے کے صاف پانی کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے اقدامات کئے جائیں۔ ادھر آلوسہ بینلی پورہ اشٹنگو کے دیہات میں بھی پینے کے صاف پانی کی قلت کا سامنا ہے ۔