حدبندی احکامات کی گزٹ نوٹیفیکیشن چیلنج نہیں کیا جاسکتا، مرکز کا موقف

نیوز ڈیسک

نئی دہلی//وزارت داخلہ نے جموں و کشمیر حد بندی کمیشن کے خلاف دائر درخواستوں پر اپنا موقف واضح کیا ہے۔ مرکز و الیکشن کمیشن نے سپریم کورٹ میں اپنا موقف رکھتے ہوئے کہا کہ گزٹ نوٹیفیکیشن کے بعد حد بندی احکامات کو چیلنج نہیں کیا جاسکتا۔ درخواست گزاروں کے مطابق غیر قانونی حد بندی کا نوٹیفکیشن، جس میں 2011 کی آبادی کی مردم شماری کی بنیاد پر جموں و کشمیر میں حد بندی کے عمل کو انجام دینے کی ہدایت کی گئی تھی، غیر آئینی ہے کیونکہ یوٹی کے لیے 2011 میں کوئی مردم شماری نہیں کی گئی تھی۔ جموں و کشمیر میں سیٹوں کی تعداد 107 سے بڑھا کر 114 کرنے کو آئین کے آرٹیکل 81، 82، 170، 330 اور 332 اور جموں و کشمیر تنظیم نو قانون 2019 کی دفعہ 63 کے خلاف بھی چیلنج کیا گیا ہے۔ جس میں اس بات پر زور دیا جاتا ہے کہ ترمیم متعلقہ آبادی کے ساتھ متناسب نہ ہونا یوٹی ایکٹ کے سیکشن 39 کی بھی خلاف ورزی ہے۔واضح رہے کہ جموں وکشمیر میں اس وقت کوئی قانون ساز اسمبلی نہیں ہے اور خطے کا نظم ونسق مرکز کے زیر انتظام چل رہا ہے۔ حد بندی ایک قانون ساز ادارہ کے ساتھ کسی ملک، ریاست یا خطے کے علاقائی حلقوں کے حدود طے کیے جاتے ہیں۔