جی7ممالک کے سربراہی اجلاس کے اختتامی اعلامیہ میں اہم پیغامات اسرائیل کوبین الاقوامی قانون پر عمل کرنے کی صلاح،شہری ہلاکتوں پر گہری تشویش

یو این آئی

میڈرڈ// جی 7 ممالک کے رہنماؤں نے کہا ہے کہ وہ مشرق وسطیٰ میں ہونے والی تمام شہری ہلاکتوں کی یکساں مذمت کرتے ہیں اور شہری ہلاکتوں بالخصوص خواتین اور بچوں کی ناقابل قبول تعداد پر انتہائی فکر مند ہیں۔امریکہ، جرمنی، انگلینڈ، جاپان، فرانس، کینیڈا اور اٹلی پر مشتمل جی 7 ممالک کے ممالک اور یورپی یونین کے سربراہان کی شراکت سے اطالوی شہر بورگو ایگنازیا میں منعقدہ 50 واں جی 7 سربراہی اجلاس دوسرے دن اختتامی ا علامیہ کے ساتھ اپنے انجام کو پہنچا۔ بیان میں اسرائیل کی حمایت کا اعادہ کیا گیا اور کہا گیا کہ ’’اپنے دفاع کے حق کو استعمال کرتے ہوئے، اسرائیل کو ہر صورت میں بین الاقوامی انسانی قانون سمیت بین الاقوامی قانون کے مطابق عمل کرنا چاہیے‘‘۔’’ہم تمام شہری ہلاکتوں کی یکساں مذمت کرتے ہیں اور خاص طور پر خواتین اور بچوں سمیت شہری ہلاکتوں کی ناقابل قبول تعداد پر گہری تشویش رکھتے ہیں‘‘۔ اعلامیہ میں تمام فریقین سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ شہریوں کے تحفظ کے لیے ٹھوس اقدامات کریں۔بیان میں سب سے پہلے امریکی صدر جو بائیڈن کی طرف سے اعلان کردہ غزہ میں جنگ بندی کی تجویز کی حمایت کرنے پر زور دیا گیا۔حماس کو اس پیشکش کو قبول کرنے اور حماس پر اثر و رسوخ رکھنے والے ممالک پر معاہدے کو قبول کرنے کے لیے دباؤ ڈالنے کی اپیل کی گئی ہے۔روس یوکرین جنگ میں یوکرین کو دی جانے والی قطعی حمایت کی تصدیق کرنے والے اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ”ہم یوکرین کو فوجی، بجٹ، انسانی اور تعمیر نو کی امداد جاری رکھنے کے لیے پرعزم ہیں۔ ہم یوکرین کی فوری طور پر قلیل مدتی مالیاتی ضروریات کو پورا کرنے اور اس کی طویل مدتی بحالی اور تعمیر نو کی ترجیحات میں تعاون کرنے سے مضبوطی سے وابستہ ہیں‘‘۔ایران کی جانب سے 13-14 اپریل کو اسرائیل پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا گیا کہ خلیج عدن اور بحیرہ احمر میں تجارتی بحری جہازوں پر حملے بند ہونے چاہئیں۔ اعلامیہ میں یمن میں حوثیوں سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ زیر حراست جہاز رانوں کو رہا کریں۔بیان میں کہا گیا ہے کہ افریقہ کے ساحل کے علاقے میں سلامتی، دہشت گردی، تنازعات اور نقل مکانی بدستور تشویشناک ہے۔اعلامیہ میں ساحل خطے کے ممالک سے آئینی نظام کی منتقلی کے عمل کو تیز کرنے کا مطالبہ کیا گیا اور اس بات پر زور دیا گیا کہ G7 ممالک اس سلسلے میں مدد کے لیے تیار ہیں۔

ہمیں ہر مسئلہ کو سنجیدگی سے لینا ہوگا: شیوراج
یو این آئی
نئی دہلی// مرکزی دیہی ترقی کے وزیر شیوراج سنگھ چوہان نے اگلے 100 دنوں کیلئے دیہی ترقی کی وزارت کی مختلف اسکیموں کے ایکشن پلان کے بارے میں کہا ہے کہ ہمیں ہر مسئلہ کو سنجیدگی سے لینا ہوگا، اور اس کیلئے اگر کسی بھی اسکیم کے اصول یہ ہیں کہ اگر نظام میں تبدیلی کی ضرورت ہو تو ضروری ترامیم بھی کی جائیں۔چوہان نے کل شام افسران کے ساتھ دیہی ترقی کی وزارت کی مختلف اسکیموں کے 100 دن کے ایکشن پلان پر میٹنگ کی اور آنے والے 100 دن کے ایکشن پلان کو مضبوطی اور مؤثر طریقے سے نافذ کرنے پر زور دیا۔ہفتہ کو وزارت کی طرف سے جاری کردہ ایک ریلیز کے مطابق چوہان نے میٹنگ میں کہا’’ہم سب کو دیہی ترقی کی ہر اسکیم پر پوری طاقت کے ساتھ مل کر کام کرنا ہوگا، تب ہی وزیر اعظم نریندر مودی کا ترقی یافتہ ہندوستان کا خواب پورا ہوگا‘‘۔قومی سماجی امداد پروگرام پر بات چیت کرتے ہوئے، مرکزی دیہی ترقی کے وزیر نے کہا، “ہمیں بوڑھوں، بیواؤں اور معذوروں کی مثالی زندگی کے لیے پروجیکٹ کی ساخت بنانا ہے، جس کے لیے ہمیں ہر مسئلے کو سنجیدگی سے لینا ہوگا اور اس کے لیے اگر قوانین اگر نظام میں تبدیلی کی ضرورت ہے تو اس میں ترمیم بھی کی جائے۔دیشا کمیٹیوں کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ دیشا کمیٹیوں، ڈسٹرکٹ ڈیولپمنٹ کوآرڈینیشن اور مانیٹرنگ کمیٹی کو مضبوط کرنے کی ضرورت ہے اور اس کے لیے وہ تمام نو منتخب اراکین اسمبلی کو خط لکھیں گے جس میں ان سے ہر چھوٹے بڑے مسئلے پر مسلسل توجہ دینے کی درخواست کریں گے۔ ترقی کر سکتے ہیں۔دیہی ترقی کے وزیر مملکت ڈاکٹر چندر شیکھر پیمسانی، کملیش پاسوان اور وزارت کے سینئر افسران بھی میٹنگ میں موجود تھے۔