جیٹلی کچھ نہیں بولتے، مودی بحث میں حصہ نہیں لے رہے :راہل

نئی دہلی//کانگریس کے صدر راہل گاندھی نے وزیر اعظم نریندر مودی پر رافیل طیارہ سودے پر پارلیمنٹ میں بحث سے راہ فرار اختیار کرنے کا الزام لگایا اور کہا کہ بحث میں ان کی جگہ وزیر خزانہ ارون جیٹلی اس مسئلے بولتے ہیں اور رافیل سے منسلک سوالات کا جواب دینے کے بجائے انہیں گالی دیتے ہیں ۔مسٹر گاندھی نے جمعہ کو پارلیمنٹ ہاؤس کے احاطے میں صحافیوں کو بتایا کہ رافیل مسئلے پر لوک سبھا میں بحث ہو رہی ہے لیکن مسٹر مودی بحث میں حصہ نہیں لے رہے ہیں۔ وزیراعظم کی جگہ وزیرخزانہ ارون جیٹلی سامنے آئے اور انہوں نے رافیل کے بارے میں کوئی جواب نہیں دیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ‘‘مسٹر جیٹلی نے رافیل پر کوئی جواب نہیں دیا ہے بلکہ مجھے گالی دی ہے ’’۔کانگریس کے صدر نے کہا ہے کہ مسٹر جیٹلی کاانہیں گالی دینے کا جواز نہیں ہے ۔ انہیں گالی نہیں دینی چاہئے ،بلکہ سوالات کا جواب دینا چاہئے تھا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو اس سودے کے بارے میں بتانا چاہئے کہ 526 کروڑ روپے کے طیارے کا سودا 1600 کروڑ روپے میں کیوں طے کیا گیا۔ حکومت یہ بھی بتائے کہ یہ کام فضائیہ کے کہنے پر کیا گیا ہے یا خود مسٹر مودی نے یہ فیصلہ کیا ہے ۔ حکومت یہ بھی بتائے کہ 126 طیاروں کی جگہ محض 36 طیاروں کے لئے سودا طے کیوں کیا گیا۔ساتھ یہ بھی بتائیں کہ آیا یہ فیصلہ مسٹر مودی نے کیا ہے یا ایئر فورس کے کہنے پر کیا گیا ہے ۔لوک سبھا میں اپوزیشن نے رفائیل جنگی طیارہ خریدار ی معاملہ میں عائد الزامات پر وزیر اعظم نریندر مودی کی خاموشی پر سوال اٹھاتے ہوئے آج ان سے بیان دینے اور اس معاملے پر مشترکہ پارلیمانی کمیٹی(جے پی سی) کی تشکیل کا مطالبہ کیا۔اپوزیشن اراکین نے کہا کہ مسٹر مودی ہر موضوع پر کچھ نہ کچھ بیان دیتے ہیں ، ٹوئٹر کے ذریعہ اپنا ردعمل ظاہر کرتے رہتے ہیں لیکن رفائیل سودے میں مبینہ گھپلے کے بارے میں انہوں نے ابھی تک ایک لفظ بھی نہیں کہا ہے ۔ نہ ہی کوئی ٹوئٹ کیا ہے ۔ انہیں ایوان میں آکر اس معاملے پر ذاتی طورپر بیان دینا چاہئے ۔رفائیل سودے پر ضابطہ 193 کے تحت بحث کو آگے بڑھاتے ہوئے سماج وادی پارٹی کے دھرمیندر یادو نے 2016میں سودے کے دوران فرانس میں وزیر دفاع او ردفاع سکریٹری کی غیر موجودگی پر سوا ل اٹھائے ۔