جہانگیر چوک دستی بم دھماکے سے دہل اُٹھا، نوجوان جاں بحق،18زخمی

سرینگر//شہر کے قلب جہا نگیر چوک میں دستی بم کے ایک دھماکے میں ایک شہری ہلاک جبکہ خواتین اور ٹریفک پولیس اہلکاروں سمیت18افراد زخمی ہوئے جبکہ2آٹو رکھشوں کو بھی نقصان پہنچا۔ جہانگیر چوک میںکر ائم برانچ ہیڈ کوارٹر کے نزدیک جمعرات شام6بجے کے قریب مشتبہ اسلحہ برداروں نے سی آر پی اید کی ایک گاڑی کو نشانہ بنانے کی غرض سے دستی بم پھینکا جو زور دار دھماکے کے ساتھ پھٹ گیا۔ دھماکے کی وجہ سے بھاگم دوڑ اور افراتفری کا ماحول پیدا ہوا،اور لوگ محفوط مقامات کی طرف بھاگنے لگے۔دستی بم کا نشانہ چوک گیا اور وہ سڑک پر ہی پھٹ گیا،جس کی زد میں آکر کئی شہری مضروب ہوئے ۔اس دھماکے میں شہری مقصود احمد شاہ ولد علی محمد شاہ ساکن اوم پورہ بڈگام زخموں کی تاب نہ لاکر دم توڑ بیٹھا جبکہ دھماکے میں 5خواتین سمیت18دیگر افراد زخمی ہوئے ۔صدر اسپتال سرینگر کے ایک سنیئر ڈاکٹر نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ 18زخمیوں کو اسپتال میں علاج ومعالجہ کیلئے داخل کیا گیا ،جن میں کئی خواتین بھی شامل ہیں جبکہ ایک شخص کو مردہ حالت میں اسپتال لایا گیا ۔مذکورہ معالج نے کہا’’ تمام زخمیوں کو آہنی ریزے لگے ہیں،تاہم کسی بھی زخمی کی حالت تشویش ناک نہیں ہے‘‘۔عینی شاہدین کے مطابق گرینیڈ دھماکے میں 2آٹو رکھشائوں زیر نمبرات JK0AB/8985 اور JK01B/6536کو بھی نقصان پہنچا ۔شہر سرینگر کے مرکز میں طویل عرصے کے بعد جنگجوئوں نے اپنی موجودگی کا احساس دلانے کی کوشش کی ہے ۔  پولیس ترجمان نے جہانگیر چوک کے نزدیک گرینیڈ دھماکے  میں ایک شخص کے ہلاک اور13کے زخمی ہونے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ جنگجوئوں نے سہ پہر دستی بم سے حملہ کیا۔پولیس میڈیا سینٹر کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا کہ دھماکے میں ٹریفک پولیس اہلکار بھی زخمی ہوا،جبکہ زخمیوں کو صدر اسپتال پہنچایا گیا جہاں پر ایک زخمی مقصود احمد شاہ ولد علی محمد داکن بڈگام زخموں کی تاب نہ لاکر چل بسا۔انہوں نے کہا کہ اس معاملے کی تحقیقات کا سلسلہ شروع کیا گیا۔