جورا کے وزیر اعلیٰ پر تیکھے وار

 جموں//کانگریس نے محلوط حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ریاست کے حد اختیار ’سٹیٹ سبجیکٹ‘معاملات پر بھی نئی دہلی کے فرمان کے بعد کارروائی ہوتی ہے اور موجودہ سرکار خود کوئی بھی فیصلہ نہیں لیتی  ۔وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کے ماتحت محکموں کے مطالبات ِ زر پر بحث میں حصہ لیتے ہوئے کانگریس پارٹی کے لیڈر نوانگ ریگزن جورا نے وزیر اعلیٰ سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا ’’شوپیان معاملہ میںآپ نے مرکزی وزیر دفاع کو پوچھنے کے بعد ایف آئی آر درج کی، حالانکہ یونیفائیڈ کمانڈ کی آپ سربراہ ہیں، آپ خود یہ فیصلہ لے سکتی تھی لیکن آپ نے ایسا نہیں کیا‘‘۔ انہوں نے طنز کرتے ہوئے کہاکہ آپ نے ناگپور سے اجازت نہیں لی جس کی وجہ سے فوج نے اسی معاملہ میں کونٹرایف آئی آر درج کی، آئندہ کوئی معاملہ ہوتو پھر آپ کو نئی دہلی کے ساتھ ساتھ ناگپور سے بھی پوچھنا پڑے گا۔ ریگزن جورا نے کہاکہ ریاست کے ماتحت جومعاملات ہیں، ان کے فیصلے خود کریں نہ کہ انہیں نئی دہلی کے سپرد کر دیاجائے۔انہوں نے کہاکہ شوپیان واقعہ پر ہوئی بحث کے جواب میں آپ(وزیر اعلیٰ)نے کانگریس قیادت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ جوکچھ اب تک کیا وہ بھاجپا حکومت نے کیا اور آج بھی کوکچھ کریں گے وہ مودی ہی کریں گے۔ انہوں نے کہاکہ بھارتیہ جنتا پارٹی نے اپنی NGO'sکے ذریعہ مختلف عدالتوں اور عدالت عظمیٰ میں ریاست جموں وکشمیر کی خصوصی پوزیشن کو چیلنج کیاہے۔