جنگ بندی کا اعلان خوش آئند ، امن عمل یقینی بنانے کیلئے اہم اقدام :مین اسٹریم خیمہ

سرینگر// نائب وزیر اعلیٰ ،نیشنل کانفرنس ،ڈی پی این اور لوک جن شکتی پارٹی نے مرکزی حکومت کی طرف سے وادی میں ماہ رمضان کے دوران جنگ بندی اعلان کا خیر مقدم کیا ہے۔نائب وزیر اعلیٰ کویندر گپتا نے جموں کشمیر میں رمضان کے مبارک مہینے میں مرکز کی طرف سے سیکورٹی اوپریشن کو موخر کرنے کے اعلان کا خیر مقدم کیا ہے ۔ مرکز کے اس فیصلے پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے نائب وزیر اعلیٰ نے کہا کہ اس فیصلے کی بدولت ریاست میں امن کے قیام کیلئے راہ ہموار ہو گی ۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ تمام امن پسند لوگ مرکز کی طرف سے دی گئی اس سہولیت کا بھر پور فائدہ اٹھائیں گے اور ریاست میں پائدار امن کو قائم رکھنے میں مدد کریں گے جو ریاست کی کلہم ترقی اور خوشحالی کیلئے ضروری ہے ۔ نیشنل کانفرنس نے خیر مقدم کرتے ہو ئے دو سرے فریق کو بھی اپنا کر دار ادا کر نے پر زور دیا ہے ۔پارٹی کے صوبائی صدر ناصر اسلام وانی نے بتایا کہ معاہدے کو موثر بنانے کی خاطر دوسرے فریق کو بھی آگے آکر اپنا کردار نبھانا چاہیے اورتمام فریقین کے ساتھ مفاہمت کو یقینی بنانے کی خاطر ٹھوس اقدامات کئے جانے چاہئیں۔ انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے کہا کہ دوسرے فریق پراہم ذمہ داری عائد ہوتی ہے تاکہ دیرپا امن اور مفاہمت کو پروان چڑھانے اور ماحول کو سازگار بنانے کے لیے بندوقوں کو خاموش کیا جائے۔ڈی پی این سربراہ غلام حسن میر نے کہا کہ ایسے اقدامات سے ریاست میں اعتماد سازی کے ماحول کو پروان چڑھانے میں مدد ملے گی۔ میر نے وزارت داخلہ کی جانب سے وادی میں جنگ بندی معاہدے کو ہری جھنڈی دکھانے پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے اسے اہم قدم سے تعبیر کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جنگ بندی جیسے اقدامات سے وادی میں اعتماد سازی کے اقدام کو پروان چڑھانے میں مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ وادی کی سیاسی جماعتوں کی جانب سے جنگ بندی مطالبہ امن عمل کو یقینی بنانے کے لیے ایک اہم اقدام ہے۔ایل جے پی لیڈر اور قومی ترجمان سنجے صراف نے جنگ بندی اعلان کی سراہنا کرتے ہوئے عسکریت پسندوں سے بھی اپیل کی کہ وہ جنگ بندی کا مثبت جواب دیں۔سنجے صراف نے کہا کہ ماہ رمضان امن کا مہینہ ہے اور اگر دونوں جانب سے جنگ بندی کی پہل ہوتی ہے تو ہلاکتوںاورخون خرابہ کا سلسلہ رک جائے گا۔