جنگلی جانور بھی پیچھے نہیں

جموں// جنگلی جانوروں کے حملوں میںریاست میں پچھلے دو برسوں کے دوران  30افراد ہلاک اور 253زخمی ہوئے ہیں۔قانون ساز اسمبلی میں نیشنل کانفرنس کے ممبر اسمبلی عید گاہ مبارک گل کے سوال کے جوا ب میں جنگلات وماحولیات کے وزیر چودھری لال سنگھ نے بتایا کہ پچھلے دو برسوں کے دوران ریاست جموںوکشمیر میں جنگلی جانوروں کے حملوںمیں 30افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے جبکہ 253شدید طورپر زخمی ہوئے۔لال سنگھ نے اعداد وشمار پیش کرتے ہوئے کہا کہ مالی سال2016.17کے دوران ریاست میں 21افراد جنگلی جانوروں کے حملوں میں مارے جا چکے ہیں اور 156افراد زخمی ہوئے ہیں۔انہوں نے مالی سال2017.18کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس عرصہ دوران 9افراد ہلاک جبکہ 97زخمی ہوئے ہوئے ہیں۔وزیر نے مزید بتایا کہ  جنگلی جانوروں کے حملوں میں مارے گئے افراد کے حق میں 83لاکھ روپیہ کا معاوضہ فراہم کیا گیا ہے جبکہ زخمیوں کو 105لاکھ روپیہ دئے گئے ۔انہوں نے کہا کہ محکمہ جنگلی جانوروں کو قابو کرنے کیلئے اقدامات کر رہا ہے ۔جبکہ جنگلوں اور دیگر بالائی علاقوں میں رہائش پذیز لوگوں کو بتایا گیا ہے کہ وہ گھروں سے باہر آتے وقت احتیاط برتیں ۔ہرن کی تعداد کے متعلق پوچھے گے سوال کے جواب میں وزیر نے بتایا کہ داچھی گام پارک میں اس وقت 182ہرن موجود ہیں ۔