جنگجوئوں کے اعانت کاروں کا نیٹ ورک

اننت ناگ//پولیس نے پیر کے روزکہا کہ اننت ناگ میں پولیس نے ایک جنگجوجنگجو تنظیم کا نیٹ ورک پکڑا اور قصبے میں دھماکے کرنے کیلئے آئی ای ڈی تیار کرنے میں ملوث4ملزمان کو گرفتار کیا جو نوجوانوں کو سوشل میڈیا اور آن لائن پلیٹ فارم کے ذریعے عسکریت میں شامل ہونے کی ترغیب بھی دیتے تھے۔ ان میں پلوامہ اور بارہمولہ کے دو نوجوان بھی شامل ہیں۔ پولیس کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا کہ ایک مخصوص اطلاع پر کارروائی کرتے ہوئے جنگجو کے اعانت کار عامر ریاض لون ساکن بارہمولہ  کو گرفتار کیا گیا۔ اس کے قبضے سے الیکٹرانک آلات سمیت قابل اعتراض مواد برآمد ہوا۔ تفتیش کے دوران یہ بات سامنے آئی کہ گرفتار ملزم کا تعلق لشکر طیبہ کے ایک سرگرم جنگجو سے ہے جس کا نام ہلال شیخ ساکن بارہمولہ ہے۔ تفتیش کے دوران عامر ریاض کے انکشاف پر یہ بات سامنے آئی کہ ایک اور جنگجو کااعانت کار اویس احمد شاخساز ساکن سیر ہمدان اننت ناگ ، انٹرنیٹ پلیٹ فارم پر معلومات کی مدد سے آئی ای ڈی بنانے میں مصروف ہے جس کے بعد اویس احمد کو گرفتار کیا گیا۔پولیس بیان میں مزید کہا گیا کہ معاملے کی مزید تفتیش میں جنگجوئوں کے مزید2ساتھیوں کے ملوث ہونے کا انکشاف ہوا اور بعد میں انہیں بھی گرفتار کر لیا گیا۔ان میںصہیب مظفر قاضی ساکن راجپورہ پلوامہ کا براہ راست رابطہ عاقب ڈار نامی جنگجو کے ساتھ تھا ،جو صہیب قاضی کو سیکورٹی فورسز پر حملہ کرنے کے لیے دستی بم فراہم کرتا تھا۔ پولیس نے ایک اور جنگجو اعانت کار طارق ڈار کو بھی دھر لیا جو ایک سرگرم جنگجواسلم ڈار کے ساتھ رابطے میں پایا گیا، جو کہ کولگام کا رہنے والا ہے۔پولیس نے کہا کہ یہ نیٹ ورک لشکر کے سرگرم جنگجوئوں کے لئے کام کر رہا تھا اور اننت ناگ ٹاؤن میں دھماکے کرنے کے لیے آئی ای ڈی تیار کررہا تھا تھا۔ مزید برآں یہ نیٹ ورک وادی کے نوجوانوں کو جنگجوئوں کی صفوں میں شامل ہونے کی ترغیب دینے میں بھی ملوث تھا۔