جنوبی کشمیرمیں سیکورٹی چیلینج

  سرینگر// جنوبی نشست کیلئے3مراحل میں پارلیمانی انتخابات کے دوران چاروں حساس اضلاع میں 30ہزار اضافی فورسزاہلکاروں کو تعینات کیا جائے گا،جبکہ پولنگ مراکز پر دہرے حفاظتی انتظامات کے علاوہ ہنگامی صورتحال کیلئے سریع الحرکت دستوں کو تیاری کی حالت میں رکھا جائے گا۔آئی جی سی آر پی ایف ذوالفقار حسن نے جنوبی کشمیر میں انتخابات کو منعقد کرنے کے عمل کو چلینج سے تعبیر کرتے ہوئے کہا کہ گاڑیوں میں گشتوں،چیک پوائنٹوں کو نصب کرنا اور شبانہ گشت منصوبے کا حصہ ہے۔جنوبی کشمیر کی پارلیمانی نشست کیلئے تینوں مراحل میں الیکشن کو چلینج قرار دیتے ہوئے اعلیٰ سیکورٹی حکام نے کہا کہ ضلع اسلام آباد(اننت ناگ) میں300ایسے مقامات کی نشاندہی کی گئی ہے جہاں’’کثیر دائروں پر مشتمل سیکورٹی موجود رہے گی۔‘‘ان کا کہنا ہے کہ اس کے علاوہ300اضافی فورسزکمپنیوں کو بھی چاروں حساس اضلاع میں23 اپریل سے تعینات کیا جائے گا۔ اعلیٰ پولیس افسر نے نام مخفی رکھنے کی شرط پر بتایا کہ ضلع اسلام آباد(اننت ناگ) میں300ایسی جگہوں کی نشاندہی کی گئی ہے جہاں’’ جامع اور وسیع سیکورٹی انتطامات کئے جائیں گے۔‘‘ انہوں نے کہا’’ جنوبی کشمیر میں شمالی اور وسطی کشمیر کے مقابلے میں سیکورٹی محاز وں پر زیادہ چلینجوں کا سامنا ہے،تاہم ہم اس بات کو یقینی بنا رہے ہیں کہ سب کچھ احسن طریقے سے پائے تکمیل تک پہنچے،تاہم جنگجوئوں کی طرف سے انتخابی عمل میں رخنہ ڈالنے کی کسی کوشش کو بھی خارج از امکان قرار نہیں دیا جاسکتا۔‘‘ ان کا کہنا تھا کہ فورسز اور پولیس کے علاوہ سی آر پی ایف کا بنیادی کردار مکمل سیکورٹی فراہم کرنا ہے،اور فوج انکی پشت پر رہے گی،اور اسی وقت انہیں طلب کیا جائے گا،جب صورتحال پیچیدہ ہوجائے۔ مذکورہ پولیس افسر نے بتایا’’ تمام300پولنگ مراکز پر دہری سیکورٹی رہے گی،جبکہ فورسز کی تعیناتی  کا منصوبہ بھی ترتیب دیا گیا ہے۔‘‘ انہوں نے کہا کہ جن جگہوں کی نشاندہی کی گئی ہے،وہاں پر فورسز غیر معمولی طور پر متحرک رہے گی،جبکہ چلینجوں کو مد نظر رکھتے ہوئے ذمہ داری کا اشتراک کیا گیا ہے۔اعلیٰ پولیس افسر کا کہنا تھا’’ جن لوگوں کو انتخابی مراکز کی سیکورٹی کا کام سونپا گیا ہے،اپنے کام تک محدود رہیں گے،جبکہ جنگجوئوں سے متعلق چلینجوں کا سامنا کرنے کیلئے ایک اور سیکورٹی دائرہ تیار رہے گا۔ آئی جی سی آر پی ایف(آپریشنز) ذوالفقار حسن کا ماننا ہے کہ جنوبی کشمیر کے پارلیمانی حلقے میں کثیر چلینجوں کا سامنا ہے،اور ان سے نپٹنے کیلئے فورسز تیار ہے۔انہوں نے کہا’’ہم سیکورٹی منصوبے کو حتمی شکل دے رہے ہیں،اور امید ہے کہ سب کچھ ٹھیک ہوگا۔‘‘ ذوالفقار کا کہنا تھا’’سریع الحرکت دستے پہلے ہی متحرک ہیں،جبکہ جن علاقوں میں انتخابات ہونے جا رہے ہیں وہاں پر شبانہ گشتوں کا سلسلہ بھی شروع کیا گیا ہے۔آئی جی سی آر پی ایف نے کہا کہ سی آر پی ایف نے اپنی گشتی گاڑیوں کے ذریعے بھی پیٹرولنگ کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے،جبکہ چیک پوسٹوں اور ناکوں کو بھی کئی داخلی اور اخراجی جگہوں پر قائم کیا گیا ہے۔ سی آر پی ایف میں ذرائع کا کہنا ہے کہ جنوبی کشمیر کے چار اضلاع اسلام آباد(اننت ناگ) پلوامہ،شوپیاں،کولگام  میں ان فورسز اہلکاروں کو تعینات کیا جائے گا۔ان کا کہنا تھا کہ ہر ایک کمپنی قریب100اہلکاروں پر مشتمل ہیں،تو قریب30ہزار اضافی اہلکاروں کو جنوبی کشمیر میں انتخابات کیلئے تعینات کیا جا رہا ہے۔