جموں یونیورسٹی پونچھ کیمپس کی تعمیر13سال سے تشنہ تکمیل

پونچھ//جموں یونیورسٹی کے پونچھ کیمپس کی عمارت کاکام تیرہ برس گزر جانے کے باوجود مکمل نہ کئے جانے کیخلا ف عوام خصوصاًطلباء میں سخت غم وغصہ پایا جاتا ہے اور انہوں نے انتباہ دیا ہے کہ اگر یونیورسٹی کیمپس کی تعمیر کاکام جلد پایہ تکمیل پہنچانے کیلئے اقدام نہیں کئے گئے تو وہ احتجاج کرنے کیلئے سڑکوں پر آئیں گے۔تفصیلات کے مطابق جموں یونیورسٹی کے پونچھ کیمپس کا سنگ بنیاد سال2008میں رکھاگیالیکن تیرہ برس گزرنے کے باوجود کیمپس کی عمارت کی تعمیر کاکام مکمل نہیں ہوا۔بتایاجاتا ہے کہ اس دوران کئی وجوہات کی بنا پر عمارت کی تعمیر کے کام میں خلل پیدا ہوا۔معلوم ہوا ہے کہ کیمپس کی تعمیر کیلئے جائے مقام کو کبھی ناکافی قرار دیا گیا اور ایک بار عدالت نے اس کی تعمیر پر روک لگانے کا حکم بھی جاری کیا۔پونچھ کی کئی سماجی تنظیموں نے بارہا ریاستی حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ اس کیمپس کی عمارت کی تعمیر کا کام جلدازجلد مکمل کریں اور کئی بار انہوں نے اس کیلئے احتجاج بھی کیا۔پونچھ ضلع کی ایک غیرسیاسی تنظیم حق انصاف کونسل نے انوکھا احتجاج کرتے ہوئے یونیورسٹی کیمپس کی عمارت کی تعمیر کیلئے چندہ جمع کرنے کی مہم بھی شروع کی اور چندہ جمع کرکے ضلع ترقیاتی کمشنر کے دفتر میں جمع بھی کرایاجس کے بعد ریاست کے اُس وقت کے گورنر این این ووہرا نے عمارت کی تعمیر کیلئے 1.39کروڑ واگزار کرنے کااعلان کیا۔گورنر کی طرف سے کئے گئے اس اعلان کے بعد اگرچہ پونچھ کے عوام میں اُمید پیدا ہوئی کہ اب شاید یونیورسٹی کیمپس کی عمارت کی تعمیر مکمل ہوگی لیکن پھر گورنر کی طرف سے اعلان کی گئی رقم بھی واگزار نہیں کی گئی اور یوں یونیورسٹی کی عمارت کا کام بھی پایہ تکمیل کونہ پہنچا۔ضلع پونچھ کے عوام خصوصاً نوجوانوں میں اس کے خلاف زبردست غم وغصہ پایا جاتاہے اور انہوں نے ریاست کے گورنر سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس معاملے میں ذاتی دلچسپی لیکر عمارت کی تعمیر مکمل کروائیں۔انہوں نے انتباہ دیا کہ اگر اس معاملے کو جلد حل نہیں کیا گیا تو و ہ احتجاج کرنے سڑکوں پر نکل آئیں گے۔