جموں کشمیر میں 172متاثر

سرینگر //جموں و کشمیر میں پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کی تشخیص کیلئے53ہزار785ٹیسٹ کئے گئے جن میں 6مسافروں سمیت مزید 172افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں۔ متاثرین کی مجموعی تعداد 3لاکھ 28ہزار 590 ہوگئی ہے۔ اس دوران مسلسل دوسرے دن بھی کورونا وائرس سے کسی موت نہیں ہوئی ہے ۔ جموں و کشمیر میں متوفین کی مجموعی تعداد 4419بنی ہوئی ہے۔گذشتہ 24گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس سے مزید 172افراد متاثر ہوئے ہیں جن میں 21جموں جبکہ 151کشمیر سے تعلق رکھتے ہیں۔ کشمیر سے تعلق رکھنے والے 151افراد میں 3بیرون ریاستوں سے سفر کرکے کشمیر پہنچے جبکہ دیگر 148افراد مقامی سطح پر رابطے میں آنے کی وجہ سے متاثر ہوئے ہیں۔ کشمیر میں متاثر ہ 151افراد میں سرینگر میں 67، بارہمولہ میں36، بڈگام میں 14، پلوامہ میں 10، کپوارہ میں 1، اننت ناگ میں 1، بانڈی پورہ میں 3، گاندربل میں 15، کولگام میں 3 جبکہ شوپیان میں ایک شخص کورونا وائرس سے متاثر ہوا ہے۔کشمیر میں متاثر ین کی مجموعی تعداد2لاکھ 5ہزار کا ہندسہ پار کرکے 205009ہوگئی ہے۔ اس دوران مسلسل دوسرے دن بھی کشمیر میں کورونا وائرس سے کسی کی موت نہیں ہوئی ہے۔ متوفین کی مجموعی تعداد 2247  بنی ہوئی ہے۔ جموں صوبے میں جمعرات کو کورونا وائرس سے مزید 21افراد متاثر ہوئے ہیں جن میں 3بیرون ریاستوں سے سفر کرکے جموں پہنچے جبکہ دیگر 18افراد مقامی سطح پر رابطے میں آنے کی وجہ سے متاثر ہوئے ہیں۔ جموں صوبے کے 21متاثرین میں جموں میں 4، راجوری میں 2، ڈوڈہ میں 8،کٹھوعہ میں 1، کشتواڑ میں 1، پونچھ میں 2، رام بن میں 2 جبکہ ریاستی میں 1شخص کی رپورٹ مثبت آئی ہے۔ جموں صوبے میں متاثرین کی مجموعی تعداد1لاکھ 23ہزار581ہوگئی ہے۔ اس دوران جموں میں بھی پچھلے 2دنوں سے اموات کا سلسلہ تھم گیا ہے۔ جمعرا ت کو دوسرے دن بھی یہاں کسی کی موت نہیں ہوئی ہے۔ جموں صوبے میں بھی متوفین کی مجموعی تعداد 2172بنی ہوئی ہے۔    
 
 

ہسپتالوں خبر پرسی کیلئے آنے والوںپر پابندی عائد

تیمارداروں کی تعداد بھی کم کرنیکی ہدایت، سرکیولر جاری

سرینگر /پرویز احمد /کورونا وائرس معاملات میں اضافہ کو دیکھتے ہوئے محکمہ صحت نے سرکاری و نجی اسپتالوں میں تیمارداروں کے بغیر عام لوگوںکے داخلہ پر پابندی عائد کردی ہے۔ جمعرات کو محکمہ صحت کی جانب سے جاری کئے گئے ایک سرکیولرمیںتمام سرکاری اور نجی طبی اداروں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ اسپتالوں میں تیماداروں اور خبر پرسی کیلئے آنے والے لوگوں کی تعداد کورونا وائرس کے پھیلائو کی وجہ بن رہی ہے ۔سرکیولر میں لکھا گیا ہے کہ کورونا وائرس کے پھیلائو کو روکنے کیلئے تمام چیف میڈیکل افسران، میڈیکل سپر انٹنڈنٹوں، بلاک میڈیکل افسروں اور نجی طبی اداروں کے مالکان کو ہدایت دی جاتی ہے کہ وہ تیمار داروں کی تعداد کم کرنے اور خبری پرسی کیلئے آنے والے لوگوں کے طبی اداروں میں داخلے پر پابندی عائد کریں۔حکم نامہ میں مزید کہاگیا ہے کہ سرکاری اور نجی اسپتالوں کے علاوہ نرسنگ ہوموں اور دیگر طبی اداروں میں کووڈمخالف ایس او پیز کی  سختی سے عمل آوری کرانے کیلئے اسپتالوں میں نوڈ ل افسران کی نامزدگی کو یقینی بنائیں اور تمام نوڈل افسران کی فہرست ایک دن کے اندر ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز کو روانہ کریں۔یہ بات قابل ذکر ہے کہ اس سے قبل دوسری لہر کے دوران ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز نے 17اپریل کو تمام لوگوں کے اسپتالوں میں داخلے پر پابندی عائد کی تھی جو دوسری لہر میں کمی کے بعد ہٹائی گئی تھی۔