جموں کشمیر میں کورونا نے زور پکڑ لیا، 165مثبت | دوسرے روز بھی کوئی فوتیدگی نہیں،وادی میں 156متاثر،9جموں سے

پرویز احمد 
سرینگر //جموں و کشمیر میں اتوار کو مسلسل دوسرے روز بھی کورونا وائرس متاثرین کی تعداد 150سے زیادہ رہی۔ پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران وائرس کی تشخیص کیلئے 44ہزار 300ٹیسٹ کئے گئے جن میں 5مسافروں سمیت 165افراد کی رپورٹیں مثبت آئیں ۔ جموں و کشمیر میں متاثرین کی تعداد 3لاکھ 33ہزار کا ہندسہ پار کرکے 3لاکھ 33ہزار 76ہوگئی ہے۔ اس سے قبل جموں و کشمیر میں 23ستمبر کو کورونا وائرس سے 172افراد متاثر ہوئے تھے۔ اس دوران مسلسل دوسرے دن بھی جموں و کشمیر میں وائرس سے کسی کی موت نہیں ہوئی ہے۔ جموں و کشمیر میں متوفین کی مجموعی تعداد 4440بنی ہوئی ہے۔ جموں و کشمیر میں کورونا وائرس سے مزید 165افراد وائرس سے متاثر ہوئے ہیں جن میں جموں میں 9جبکہ کشمیر میں 156افراد متاثر ہوئے ہیں۔ کشمیر میں متاثر ہونے والے 156افراد میں 4بیرون ریاستوں سے سفر کرکے لوٹے جبکہ دیگر 152افراد مقامی سطح پر متاثر ہوئے ہیں۔ کشمیر میں متاثر ہونے والے 156افراد میں سب سے زیادہ سرینگر ضلع میں 87،  بارہمولہ میں 26، بڈگام میں 9، پلوامہ میں 3، کپوارہ میں 3، اننت ناگ میں 1، بانڈی پورہ میں 13، گاندربل میں 13، کولگام میں 1جبکہ شوپیان میں کسی کی رپورٹ مثبت نہیں آئی ہے۔ کشمیر میں متاثرین کی مجموعی تعداد 2لاکھ 8ہزر 647تک پہنچ گئی ہے۔ اس دوران مسلسل دوسرے دن بھی کشمیر میں کورونا وائرس سے کسی کی موت نہیں ہوئی ہے۔ وادی میں متوفین کی مجموعی تعداد 2263بنی ہوئی ہے۔جموں صوبے کے 4اضلاع جن میں ادھمپور، راجوری، سانبہ اور کشتواڑشامل ہے، میں کسی کی رپورٹ مثبت نہیں آئی ہے جبکہ دیگر 6اضلاع میں 9افراد کی رپورٹیں مثبت قرار دی گئی ہیں۔ جموں صوبے کے 6اضلاع میں مثبت قرار دئے گئے 9اضلاع میں 1شخص بیرون ریاستوں سے سفر کرکے جموں پہنچا جبکہ دیگر 8افراد مقامی سطح پر رابطے میں آنے کی وجہ سے متاثر ہوئے ہیں۔ جموں صوبے میں مثبت قرار دئے گئے 9افراد میں جموں میں 4، ڈوڈہ میں 2،کٹھوعہ میں 1،پونچھ میں 1 جبکہ ریاسی میں 1کی رپورٹ مثبت آئی ہے۔ جموں صوبے میں متاثرین کی مجموعی تعداد 1لاکھ 24ہزار 429تک پہنچ گئی ہے۔ اس دوران جموں صوبے میں بھی مسلسل دوسرے دن بھی کورونا وائرس سے کسی کی موت نہیں ہوئی اور یہاں بھی کورونا وائرس سے فوت ہونے والوں کی مجموعی تعداد 2177بنی ہوئی ہے۔   
 
 
 

وادی کی صورتحال تشویشناک، سرگرم کیسوں کی شرح 2.3فیصد ہوگئی | عملیاتی طریقہ کار پر عملدر آمد نہ ہونا بنیادی وجہ،کوئی نئی ہیت نہیں:ڈاکٹر کھورو

پرویز احمد 
سرینگر / سرینگر ضلع میں پچھلے دو ہفتوں سے کورونا متاثرین کی تعداد میں اضافہ کی وجہ سے صورتحال کافی سنگین بنتی جارہی ہے اور مثبت کیسوں کی شرح 2.3فیصد تک پہنچ گئی ہے۔سرینگر شہر میں 24اکتوبر کو متاثرین کی مجموعی تعداد 75236تھی جو 7نومبر تک بڑھ کر 75 ہزار 950تک پہنچ گئی ہے۔ اسطرح دو ہفتوں میں 714افراد متاثر ہوئے ۔ کورونا کی روک تھام کیلئے بنائی گئی مشاورتی کمیٹی چیئرمین ڈاکٹر ایم ایس کھورو نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ’’ شادی اور دیگر سماجی تقریبات میں لوگوں کی بھارتی شرکت کی وجہ سے کیسوں میں  اضافہ ہوا ہے‘‘ ۔ڈاکٹر کھورو نے بتایا ’’  وائرس کی پہلی اور دوسری لہر کے دوران سرینگر شہر میں لوگوں نے ایس او پیز پر عمل کیا اور سماجی تقریبات سے بھی اجتناب کیا جسکی وجہ سے مثبت کیسوں کی شرح دونوں لہروں میں 1.4سے 1.5کے درمیان تھی ‘‘۔ڈاکٹر کھورو نے بتایا ’’پچھلے 2ہفتوں کے دوران مثبت کیسوں کی شرح 2.3تک پہنچ گئی ہے اور اس سے صاف ظاہر ہورہا ہے کہ سرینگرکی صورتحال کافی سنگین ہوگئی ہے۔ ڈاکٹر کھورو نے کہا ’’ ابھی ڈیلٹا پلس کے صرف 2کیس جموں میں سامنے آئے ہیں لیکن کشمیر میں وائرس کی کوئی بھی نئی ہیت سامنے نہیں آئی ہے‘‘۔ کھورو نے کہا ’’ آنے والے 3ہفتے سرینگر ضلع کیلئے کافی اہم ہونگے کیونکہ وائرس متاثرین کی تعداد کم ہونے کیلئے ایک سے 3ہفتے لگتے ہیں۔انکا کہنا تھا کہ حکومت وائرس روکنے کیلئے سنجیدہ اقدامات اٹھا رہی ہے جن میں ایس او پیز پر دوبارہ عمل آوری کو یقینی بنانا بھی شامل ہے۔ ڈویژنل کووڈ کنٹرول روم کی انچارج ڈاکٹر طلعت جبین نے بتایا ’’ شادیوں اور سماجی تقریبات میں ایس او پیز کو نظر انداز کرنا اورزیادہ تعداد میں لوگ جمع ہونے کی وجہ سے وائرس کافی پھیلا ہے‘‘۔انہوں نے کہا ’’ سرینگر ضلع میں صورتحال سنگین ہے کیونکہ کیسوں میں بتدریج اضافہ ہورہا ہے‘‘۔ڈاکٹر جبین نے کہا کہ ٹیسٹنگ ، رابطوں کی تلاش اور مختلف علاقوں میں محدود پابندیاں عائد کرنے کا عمل بھی جاری ہے لیکن اس کے بائوجود بھی لوگ قوائد و ضوابط پر عمل نہیں کررہے ہیں‘‘۔ڈاکٹر جبین نے بتایا ’’ ٹیسٹنگ کے ساتھ ساتھ نمونوں کی Gene sequencingکا عمل بھی جاری ہے اور ابھی تک کسی میں بھی ڈیلٹا پلس وائرس نہیں پایا گیا ہے‘‘۔ڈاکٹر جبین نے بتایا ’’وادی سے 190نمونے دلی بھیجے گئے ہیںاور ان سبھی نمونوں کی رپورٹیں ابھی آنا باقی ہے‘‘۔
 
 
 

پھر 526 ہلاکتیں | ملک میں 10,853کیسز

 یو این آئی
نئی دہلی// ملک میں جان لیوا کورونا وائرس کے کم ہوتے کیسز کے درمیان صحت یابی کی شرح بڑھ کر 98.24 فیصد ہو گئی ہے اور ایکٹیو کیسز کی شرح 0.42 فیصد پر آ گئی ہے۔ ہفتہ کو ملک میں 28 لاکھ 40 ہزار 174 افراد کو کورونا سے بچاؤ کے ٹیکے لگائے گئے اور اب تک ایک ارب 8 کروڑ 21 لاکھ 66 ہزار 365 افراد کو کورونا سے بچاؤ کے ٹیکے لگائے جا چکے ہیں۔ اتوار کی صبح جاری اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک میں ہلاکت خیز کورونا وائرس کے 10,853 نئے کیسز سامنے آئے ہیں اور 12 ہزار 432 مریض صحت یاب ہونے کے بعد اب تک اس وبا کو شکست دینے والے لوگوں کی مجموعی تعداد تین کروڑ 37 لاکھ 49 ہزار 900 ہو گئی ہے۔ملک میں ایکٹیو کیسز گھٹ کر 1,44,845 ہو گئے ہیں۔ اسی عرصے میں 526 مریضوں کی موت کے بعد ہلاکتوں کی تعداد چار لاکھ 60 ہزار 791 ہو گئی ہے۔