جموں کشمیرکی موجودہ صورتحال پرحریت(ع) کوتشویش

سرینگر//حریت کانفرنس(ع) نے جموں کشمیرکی موجودہ سیاسی صورتحال پرگہری تشویش کااظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہرگزرتے دن کے ساتھ یہاں عوام کش پالیسیاں نافذ کی جارہی ہیں۔ایک بیان میں حریت نے کہا کہ آئے روز یہاں ایسے قوانین متعارف اورنافذ کئے جارہے ہیں جن کا مقصد لوگوں کو خوفزدہ کرنااوران کے حقوق کومزیدسلب کرنا ہے۔بیان میں کہا گیا کہ ملازمین کو بغیرکسی تحقیقات برطرف کرنااورانہیں اپنے دفاع کا موقعہ نہ دینا بھی اسی پالیسی کاحصہ ہے۔ بیان میں کہا گیا کہ اخباری رپورٹوں کے مطابق لوگوں میں خوف و ہراس پیدا کرنے کیلئے سینکڑوں کشمیری ملازمین کو برطرف کرنے کی فہرست مرتب کی جاچکی ہے ۔حریت نے کہا کہ چونکہ جموں و کشمیر کی آبادی کا ایک بڑا طبقہ سرکاری شعبے میں کام کر رہا ہے ، لہذا ان قوانین کا مقصد انہیںخاموش کراکے اظہار رائے کو روکنے کے ساتھ ساتھ کسی بھی قسم کے اختلاف پر قدغن لگانا ہے۔بیان میں کہا گیا کہ مقامی میڈیا کو بھی مسلسل نشانہ بنایا جارہا ہے اوران کے گھروں اور دفاتر پر چھاپوں اور ان کے آلات کو ضبط کرنے کے ذریعے انہیںہراساں کرنے کا عمل بھی جاری ہے جبکہ اس حوالے سے کئی افراد کو گرفتار بھی کیا جاچکا ہے ۔بیان میں کہا گیا کہ حکمرانوں کو چاہئے کہ وہ یہاں نافذ کئے گئے سخت قوانین کو فوری طور واپس لیں اور جموںوکشمیر کے لوگوں کو ڈرانے اور دھمکانے کی پالیسیاں ترک کریں اور آزادی کے ساتھ جینے کی ان کے بنیادی حقوق کو بحال کریں۔