جموں و کشمیر میں سیکورٹی صورتحال متحرک | 2019 کے بعد 158فوجی مارے گئے:حکومت

نئی دہلی // مرکزی حکومت نے بدھ کے روز کہا کہ جموں وکشمیر میں سیکورٹی کی صورتحال "متحرک اور ہمیشہ کے ساتھ  تیار" ہے، تاہم جموں و کشمیر میں عسکریت پسندی کے خاتمے کیلئے کوئی وقت متعین نہیں کیا جاسکتا۔ پارلیمنٹ میں ایک سوال کے جواب میں ، وزیر مملکت برائے دفاع ، اجے بھٹ نے کہا کہ رواں سال جون کے آخر تک جموں و کشمیر میں انسداد عسکریت پسندی کی کارروائیوں میں 158 فوجی ہلاک ہوگئے۔انہوں نے کہا کہ2019 میں 80، 2020میں 60اور رواں سال جون تک 16 فوجی ہلاک ہوئے ہیں۔راجستھان میں چورو پارلیمانی حلقہ سے بی جے پی کے حکمران رکن پارلیمنٹ کے ایک سوال کے جواب میں ، بھٹ نے کہا کہ جموں و کشمیر میں سلامتی کی صورتحال متحرک اور ہمیشہ کے لئے تیار ہے۔انہوں نے تحریری جواب میں کہا ، " نازک ، سیکورٹی کے ماحول میں پچھلے دو سالوں میں نمایاں بہتری دیکھنے میں آئی ہے اور تمام عسکریت پسندوں کی تنظیموں پر ناقابل واپسی نقصانات پہنچانے اور عسکریت پسندی ختم کرنے کے لئے اقدامات کیے جارہے ہیں‘‘۔انہوں نے کہا ’’" تاہم ، آخری عسکریت پسن کے خاتمے کیلئے وقت کی حد رکھنا ممکن نہیں ہوگا کیونکہ پاکستان وادی میں دراندازی عسکریت پسندوں اور اسلحہ ، گولہ بارود اور اسمگلنگ کے ذریعے جموں و کشمیر میں در پردہ جنگ کے لئے نظریاتی ، سفارتی اور مالی مدد فراہم کرتا ہے‘‘۔