جموں وکشمیر کیلئے حدبندی کمیشن قائم

نئی دہلی // مرکزی سرکار نے اسمبلی اور پارلیمانی حلقوں کی نئی حد بندی کرنے سے متعلق کمیشن قائم کردیا ہے۔مرکزی وزارت قانون کی طرف سے جاری نوٹیفکیشن کے مطابق سابق سپریم کورٹ جج رنجنا پرکاش ڈیسائی کو جمعہ کے روز حد بندی کمیشن کا چیئر مین نامزد کردیا گیا ہے۔کمیشن کو جموں کشمیر، آسام،ارونا چل پردیش، منی پور اور ناگا لینڈ میں پارلیمانی اور اسمبلی حلقوں کی حد بندی کرنے کا اختیارہوگا۔اور کمیشن حد بندی کا نئے سرے سے تعین کرکے مرکزی حکومت کو سفارشات پیش کریگا۔مرکزی الیکشن کمشنر سوشیل چندرا اور جموں کشمیر سمیت دیگر چار ریاستوں کے ریاستی الیکشن کمشنر کمیشن کے ممبران ہونگے۔اسکے علاوہ 4اراکین پارلیمنٹ بھی اسکے عبوری ممبر رہیں گے۔ جموں کشمیر میں اسمبلی کی حد بندی جموں کشمیر تنظیم نو قانون 2019 کے مطابق کی جائیگی۔ اسی طرح آسام اور دیگر جنوب مشرقی ریاستوں کی حد بندی بھی حد بندی قانون 2002کے مطابق کی جائیگی۔کمیشن کے چیئرمین کی مدت ایک سال تک ہوگی اور اسی دوران اس ضمن میں سفارشات پیش ہونگی۔جسٹس ریٹائرڈ رنجنا پرکاش ڈیسائی نے سپریم کورٹ میں ستمبر 2011سے 29اکتوبر 2014تک کام کیا ہے۔