جموں وکشمیر سٹیٹ ٹیکس کی ادائیگی سکیم کو انتظامی کونسل کی منظوری

جموں /ریاستی انتظامی کونسل کا اجلاس گورنر ستیہ پال ملک کی صدارت میں بدھ کو جموں میںمنعقد ہوا جس میں صنعتی ترقی کوفروغ دینے اور سرمایہ کاری بڑھانے کے لئے جموں وکشمیر سٹیٹ ٹیکس کی ادائیگی کے سلسلے میں سکیم کی نوٹیفکیشن کو منظوری دی گئی۔

ایک سرکاری بیان کے مطابق ریاستی حکومت نے صنعتی پالیسی کو بڑھاوا دینے کے لئے سالانہ سرمایہ کاری کو2 ہزار کروڑ روپے کرنے کا مد صنعتی پالیسی2016 میں شامل کیا ہے۔ریاستی حکومت موجودہ صنعتی یونٹوں کو اِن پُٹ ٹیکس کریڈیٹ کے بعد مرکزی سرکارکی مختلف سکیموں کے تحت مختلف مراعات دیتی ہے۔یہ مراعات ایس آر او519 ،ایس آر او521 ، ایس آر او63  اور ایس آر او431 کی صورت میں دی جاتی ہیں۔

2 ہزار کروڑ روپے کی سالانہ سرمایہ کاری کو یقینی بنانے کے لئے ریاستی انتظامی کونسل نے اس سکیم کو منظوری دی ہے جس کے تحت اپنا دائرہ بڑھانے والے صنعتی اداروں کو سٹیٹ ٹیکس کے ادائیگی یقینی بنائی جائے گی اور اس مقصد کے لئے قریباً50 کروڑ روپے درکار ہوں گے۔یہ سہولت صرف اُن صنعتی یونٹوں کو دی جائے گی جو مینوفیکچرنگ کرتے ہیں۔

یہ سکیم اُن صنعتی اداروں پر لاگو نہیں ہوگی جو مرکزی حکومت کی نوٹیفکیشن بتاریخ یکم جنوری2019 کی منفی فہرست میں شامل ہیں۔ان یونٹوں میں تمباکو، پان مصالحہ، پلاسٹک تھیلیاں بنانے والے، دس میگا واٹ سے زیادہ بجلی پیدا کرنے والے، کوک، سیمنٹ، سٹیل رولنگ مِلز اور اس قسم کے دیگر صنعتی ادارے شامل ہیں۔