جعلی کھادیں اور کیڑے مار ادویات تباہ کن قصوروار ڈیلروں کوسیفٹی ایکٹ کے تحت گرفتار کیا جائے:صدرفروٹ ایسوسی ایشن سوپور

غلام محمد

سوپور//کشمیر فروٹ گروورز اینڈ ڈیلرز ایسوسی ایشن فروٹ منڈی کے صدر سوپور فیاض احمد ملک عرس کاکا جی نے کہا کہ جعلی کھادوں اور کیڑے مار ادویات کے ڈیلروں کے خلاف سیفٹی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا جانا چاہئے۔یہاں ڈاک بنگلہ سوپور میں وکشت بھارت سنکلپ یاترا (VBSY) پروگرام کے دوران ایک سائیڈ لائن میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے ملک نے کہا کہ’ہمارا کشمیری سیب ملک میں سب سے زیادہ فروخت ہونے والا ہے۔ ہمارے پاس سب سے زیادہ پیداوار ہے‘۔انہوں نے کہا کہ کشمیر کے کاشتکار بہترین معیار کے سیبوں کی پورے ہندوستان میں سال بھر فراہمی کو یقینی بنا سکتے ہیں اگر ہمیں حکومت کی طرف سے صحیح تعاون حاصل ہو۔انہوں نے مزید کہا کہ جعلی جعلی کیڑے مار ادویات اور کم معیاری کھادوں کی موجودگی سے ہماری فصل کو مسلسل مسائل کا سامنا رہتا ہے۔ ہم اس بارے میں محکمہ باغبانی کو بتاتے رہتے ہیں لیکن مسئلہ پوری طرح حل نہیں ہوتا۔ ان خراب کھادوں اور جعلی کیڑے مار ادویات کی وجہ سے فصل متاثر ہوتے ہیں اور کسانوں کو نقصان ہوتا ہے۔ملک نے کہا کہ باغات میں کیڑے مار ادویات کے سپرے سے پہلے حکومت کو مارکیٹ میں فروخت ہونے والی کیڑے مار ادویات اور کھادوں کی نوعیت اور معیار کو چیک کرنا چاہئے، کیڑے مار ادویات اور کھادوں کے پیک پر لگے بھتہ خوری کی شرح کو بھی چیک کرنا چاہئے۔ملک نے مزید کہا کہ رواں سال پھلوں کی پیداوار اور مارکیٹ اچھی رہی لیکن جعلی کیڑے مار ادویات اور درختوں پر چھڑکنے والی خراب کوالٹی کی کھادوں کی وجہ سے سیب کا پھل تباہ ہو گیا ہے اور 40 فیصد پھل سی اور ڈی گریڈ میں تبدیل ہو گیا ہے۔ کسانوں کو بھاری نقصان کا سامنا ہے۔ملک نے کہا کہ ان تمام لوگوں پر پی ایس اے لگایا جائے جو غریب کسانوں کو غیر معیاری کھاد اور جعلی کیڑے مار ادویات دے کر دھوکہ دیتے ہیں۔ ملک نے کہا کہ حکومت کو انہیں نہیں چھوڑنا چاہیے۔