تیسری لہر سے نپٹنے کیلئے سکمز تیار

سرینگر //شیر کشمیر انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز صورہ کورونا وائرس کی امکانی صورتحال سے نپٹنے کیلئے مکمل طور پر تیار ہے۔ سکمز صورہ کے ڈائریکٹر ڈاکٹر پرویز احمد کول نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ’’ ابھی کشمیر میں وائرس سے متاثر ہونے والے افراد کی تعداد میں زیادہ اضافہ نہیں ہوا ہے لیکن پچھلے چند دنوں سے جموں میں کافی اضافہ ہوا ہے اور اس بات میں کوئی شک نہیں ہے کہ جموں کے بعد اب یہ وائرس کشمیر بھی آئے گا ‘‘۔ڈاکٹر کول نے بتایا ’’اومیکرون وائرس میں یہ خاصیت ہے کہ یہ تیزی سے پھیلتا ہے لیکن اچھی بات یہ ہے کہ یہ جان لیوا وائرس نہیں ہے‘‘۔ انہوں نے کہا ’’ میرا خیال ہے کہ اومیکرون سے متاثر ہونے والے افراد بخوبی گھروں میں بیٹھ کر علاج کراسکتے ہیں‘‘۔ انہوں نے کہا ’’کورونا وائرس کی امکانی تیسری لہر یا اومیکرون وائرس سے ہم کسی بھی صورت میں نپٹنے کیلئے تیار ہے‘‘۔ ڈاکٹر کول کا مزید کہنا تھا کہ افرادی قوت ، بنیادی ڈھانچے اور دیگر چیزوںکو کسی بھی صورتحال سے نپٹنے کیلئے تیاررکھا گیا ہے‘‘۔انہوں نے کہا ’’فی الحال آئی ڈی بی(Infectious Disease Block)  میں 40 جبکہ ایک اور وارڈ میں 30کورونا مریضوں کیلئے علاج و معالجہ کی سہولیات دستیاب ہیں۔ انہوں نے کہا ’’ اسوقت اسپتال میں صرف 19مریض زیر علاج ہیں‘‘۔ ڈاکٹر پرویز کول نے بتایا ’’کورونا وائرس کی دوسری لہر کے دوران متاثرین کی تعداد میں اضافہ کو دیکھتے ہوئے بستروں کی تعداد 370تک کردی گئی تھی‘‘۔ڈائریکٹر سکمز کا کہنا تھا کہ اس بار ضرورت پڑنے پر ہم بستروں کی تعداد 750تک بڑھاسکیں گے۔انہوں نے کہا ’’سکمزنے کورونا وائرس متاثرین کے علاج ومعالجہ کیلئے قوائد و ضوابط)ُTreatment protocol) طے کر لیاہے جو پہلے سکمز صورہ اور بعد میں وادی کے دیگر اسپتالوں میں کورونا متاثرین کے علاج و معالجہ کیلئے لاگو کیا جائے گا‘‘۔