تعلیم صرف اول آنے کی دوڑ نہیں کشمیر یونیورسٹی میں سالانہ یوتھ فیسٹیول ’سونزل-2022‘ کا افتتاح

  نوجوان کثیر الثانی بننے، علم اور ہنر حاصل کر کے اپنے مستقبل کی تشکیل کریں:لیفٹیننٹ گورنر

سرینگر// لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے بدھ کو کشمیر یونیورسٹی میں سالانہ یوتھ فیسٹیول ’سونزل-2022‘ کا افتتاح کیا۔اس موقع پر حصہ لینے والے نوجوانوں کے لیے اپنی نیک خواہشات کا اظہار کرتے ہوئے، لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ سالانہ میلہ نوجوان فنکاروں کے لیے اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کرنے کا ایک بہترین موقع ہے اور ‘سونزل’ انہیں ‘ایک بھارت ،شریشٹھا بھارت ‘کے خواب کو پورا کرنے کے لیے انتہائی ضروری پلیٹ فارم فراہم کرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ سونزل کا مطلب قوس قزح ہے،، جو امید، الہام اور خوش قسمتی کی علامت ہے۔

 

لیفٹیننٹ گورنر نے مزید کہا کہ طلباء کے لیے، قوس قزح آخر کار اس وقت پہنچتی ہے جب ان کے پاس انفرادی ترقی، آزاد سوچ اور اپنے چھپے ہوئے خزانے کو دریافت کرنے کا موقع ہوتا ہے جو قوم کی تعمیر میں اپنا حصہ ڈالے گا۔یہ دیکھتے ہوئے کہ نوجوان طلباء کثیر جہتی، کثیر جہتی ہوتے ہیں، لیفٹیننٹ گورنر نے تعلیمی اداروں کو یہ ذمہ داری سونپی کہ وہ آزادی، تخلیقی صلاحیتوں اور مشغولیت کو یقینی بنانے کے لیے ان کے لیے کثیر الثانی بننے کے لیے، اور علم اور ہنر حاصل کریں تاکہ وہ مستقل طور پرترقی کی منازل طے کر سکیں۔ لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ تخلیقی سرگرمیاں نوجوان طلباء کے لیے قائدانہ صلاحیتوں، انسانی اقدار، خطرات مول لینے کی آمادگی، نئے خیالات کی طاقت کو سمجھنے، مستقبل کے چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کی اہلیت اور شخصیت کے خصائل کو پروان چڑھانے کا ایک بہترین ذریعہ ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ تعلیمی نظام میں انتخاب، تعاون، تجسس، مواصلات، تنقیدی سوچ، تخلیقی صلاحیتوں، تحقیق اور بہتر مشغولیت کو یقینی بنانے پر ہماری توجہ بہتر تعلیمی اہداف پیدا کر سکتی ہے اور طلباء کو ضروری مہارتوں، علم اور اقدار سے آراستہ کر سکتی ہے۔لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ تعلیم پہلے آنے کی دوڑ سے متعلق نہیں ہے بلکہ تعلیم زندگی میں اقدار کی بلند ترین چوٹی کو حاصل کرنے کے بارے میں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اداروں کو یقینی بنانا چاہیے کہ نئے سیکھنے کے فریم ورک اور کلیدی تصورات جیسا کہ قومی تعلیمی پالیسی کی سفارش کی گئی ہے نصاب میں شامل کیا جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ نصاب زیادہ موافقت پذیر اور متحرک ہونا چاہیے، جو جدید اختراعات کے لیے جگہ فراہم کرتا ہے۔لیفٹیننٹ گورنر نے قومی تعلیمی پالیسی کی سفارشات کو شامل کرنے کے لیے ضروری تبدیلیاں کرنے کے لیے کشمیر یونیورسٹی کی کوششوں کو سراہا۔ انہوں نے کہا، ’’یونیورسٹی آف کشمیر کو ایک سنٹر آف ایکسیلنس میں تبدیل کر دیا گیا ہے اور سائنسی تحقیق، نئے خیالات اور علم کو فروغ دیا گیا ہے، اور تعلیمی منظر نامے کے بنیادی پہلوؤں میں دنیا بھر میں تیز رفتار تبدیلیوں کے مطابق ڈھال لیا گیا ہے۔‘‘پروفیسر نیلوفر خان، وائس چانسلر، کشمیر یونیورسٹی نے میگا یوتھ فیسٹیول کے وسیع انداز کے بارے میں بتایا۔ انہوں نے مزید کہا کہ لیفٹیننٹ گورنر کی ہدایات کے مطابق، تعلیمی ترقی کے ساتھ ساتھ نوجوانوں کو بااختیار بنانا یونیورسٹی کا بنیادی مقصد ہے اور یہ یوتھ فیسٹیول اسی سمت میں ایک قدم ہے۔