تعلیمی نقصان کم کرنے کی کوشش | داخلہ کیلئے فون استعمال کئے جائیں:مولانا رحمت اللہ

سرینگر// رابطہ مدارس اسلامیہ عربیہ دارالعلوم دیو بند شاخ جموں و کشمیرکے صدرمولانا محمد رحمت اللہ قاسمی نے کہا ہے کہ مساجد کے کھولے جانے کے سلسلے میںمدارس کی طرف سے ان مساجد کے لئے اماموں کو بلائے جانے کے بعد اب مناسب معلوم ہوتا ہے کہ۲۱؍ ستمبر ۲۰۲۰ء کو نویں سے بارہویں درجات کے طلباء (جو ہمارے یہاں اعدادی سے سوم عربی تک کے درجات ہیں) کو اسکولوں میں اپنے اساتذہ سے ہدایات حاصل کرنے کی اجازت، شرائط کے ساتھ دیئے جانے کا اعلان کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں ایک اہم ہدایت یہ ہے کہ طلبہ کے والدین کی تحریری منظوریConsent) (لازمی ہے۔ اس لئے ہر آنے والے طالب علم سے اس کے والد یا سرپرست کی تحریر کا تقاضہ کیا جائے۔اسی طرح سے تعلیمی نقصان کو کم کرنے کے لئے فی الحال طلباء کے داخلہ کی کاروائی کو فونوںپر ہی ان سے رابطہ کر کے مکمل کیا جائے تاکہ طالب علموں کے حاضر ہونے پر ان کے صرف دستخط لینے کا مختصر عمل باقی رہے۔ اسی طرح سے مدارس کی صفائی ستھرائی اور Sanitisation کے لئے بھی ضروری کاروائی عمل میں لائی جائے۔ان کاموں میں مدرسہ میں عملہ اور اساتذہ کرام سے مدد حاصل کر لی جائے۔بعض مدارس میں لاک ڈاون سے قبل امتحانات ہو چکے ہیں ، بعض نے امتحانات آن لائن لے لئے ہیں، ان کے علاوہ جن مدارس کے امتحانات باقی ہیں وہ یا تو داخلہ کے وقت طلباء کا ضمنی امتحان لے لیں تب داخلہ کی کاروائی مکمل کر لیں یا اگر ابھی ممکن ہو تو آن لائن امتحان لے لیں۔کیونکہ نامساعد حالات کے سبب نہ ہی گذشتہ سال بعض جگہ تعلیمی حاضری مکمل ہو سکی ہے اور نہ بعض مدارس میں ششماہی امتحان ممکن ہو سکا ہے۔ اس لئے عمومی طور پر دارالعلوم دیوبند کے فیصلے کی روشنی میں ششماہی امتحان کو سالانہ کے قائم مقام نہیں کیا جا سکا۔ البتہ جن مدارس میں تعلیمی حاضری طالب علم کی پچاس فی صد یا اس سے زائد ہو اور ششماہی امتحان میں بھی شرکت کر کے کامیابی حاصل کر چکا ہو ایسے طالب علم کو اگلے درجہ کے لئے اسی حاضری اور امتحان کے پیش نظر ترقی دی جاسکتی ہے۔مدارس اس سلسلے میں جو بھی کاروائی کریں نتائج کے نقل دفتر رابطہ کو ضرور بھیج دیں۔گذشتہ سال ۲؍ ذی الحجہ ۱۴۴۰ھ سے اب تک یعنی وسط محرم ۱۴۴۲ھ تک کا عرصہ مختلف حالات کی وجہ سے مالی اعتبار سے مدارس کے لئے کافی کمزور رہا ہے، اس لئے اس دوران کے حسابات نسبتاً کم ہیں۔ جب کہ وقفہ کا ایک سال سے زائد یعنی تقریبا چودہ ماہ کا عرصہ گذرا ہے اس لئے یہ حسابات جلد از جلد مکمل کر لئے جائیں اور اندراجات کی تکمیل کر لی جائے، جو بھی مالی سال آپ کے یہاں متعین ہو اس کے مطابق حساب کو مرتب بھی کریں اور حسب سابق آڈٹ بھی کرائیں۔مدرسہ میں حاضر شدہ عملہ اور اماموں کے ذریعہ سورہ یاسین شریف، آیت کریمہ، درود شریف، حصن حصین، مناجات مقبول، اورادِ فتحیہ، مسنون دعاؤوں نیز سورہ لایلٰف قریش وغیرہ میں سے کچھ معمولات کی پابندی کے ساتھ دعاؤوں کا اہتمام کرنا نہ بھولیں۔