تری پورہ میں بی جے پی کو بڑا جھٹکا ، ایک ہزار سے زائد کارکنان کانگریس میں شامل

اگر تلہ//تری پورہ میں آئندہ سال کے انتخابات کے اختتام پر، کانگریس کو ا?ج اس وقت بڑی کامیابی ملی جب بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے ایک ہزار کارکنوں نے کانگریس میں شمولیت اختیار کر لی۔ پارٹی تبدیلی کا ایک دلچسپ پہلو یہ بھی ہے کہ یہ بی جے پی کارکنان پہلے کانگریس میں ہی تھے اور ایک سال پہلے انڈین نیشنل اسٹوڈنٹس یونین کے سابق ریاستی صدر مجیب الاسلام مجمدار کی قیادت میں بی جے پی میں شامل ہوئے تھے، لیکن اب انہوں نے یہ کہتے ہوئے پھر کانگریس کا دامن تھام لیا کہ بی جے پی ا?ئینی معیار پر عمل نہیں کر رہی اور فرقہ وارانہ سیاست کو فروغ دے رہی ہے۔یہاں کانگریس بھون میں منعقد ایک سادہ پروگرام میں ہزاروں کی تعداد میں بی جے پی چھوڑ کر ا?ئے کارکنوں نے کانگریس کی رکنیت حاصل کی۔ اس موقع پر ا?ل انڈیا کانگریس کمیٹی کے ریاستی انچارج بھوپین وورا بھی موجود تھے. ریاستی کانگریس صدر و?رج?ت سنہا نے کارکنوں کا خیر مقدم کیا اور کہا کہ ریاست میں بی جے پی کی خراب کارکردگی کو دیکھتے ہوئے کانگریس میں ا?نے کے لئے اور بہت سے کارکن انتظار میں ہیں. ان میں ترنمول کانگریس کے بھی کارکن شامل ہیں۔دوسری طرف صوبائی بی جے پی صدر وپلو کمار دیو نے رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کانگریس میں واپس گئے لوگ اس امید کے ساتھ بی جے پی میں ا?ئے تھے کہ وہ اپنے ذاتی مفاد کے لئے پارٹی کا استعمال کر سکتے ہیں اور کچھ تو الیکشن لڑنے کا خواب لے کر ا?ئے تھے، لیکن وہ اپنا مقصد پورا نہیں کر پائے۔ انہوں نے زور دیتے ہوئے کہا کہ ان کے جانے سے بی جے پی پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔