ترال کو جان بوجھ کر الگ تھلگ کیا گیا

 سرینگر//جنوبی کشمیر میں بھاجپا کیلئے زرخیز زمین ہونے کا دعویٰ کرتے ہوئے بھاجپا کا کہنا ہے کہ وہ جنوبی کشمیر می ترقی کے متمنی ہے۔ بی جے پی کا کہنا ہے کہ جنوبی کشمیر میں لوگ ترقی چاہتے ہیں،اور انکی جماعت کی توجہ جنوبی کشمیر پر ہی مرکوز ہے۔پارٹی کا کہنا ہے کہ جنوبی کشمیر میں بھاجپا کیلئے زمین سب سے زیادہ زرخیز ہے،اسی لئے گزشتہ20 دنوں میں ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے بھاجپا میں ارکان سازی کی مہم کے دوران شمولیت کی۔پارٹی ترجمان الطاف ٹھاکر کا کہنا ہے کہ جنوبی کشمیر کو ترقی سے ہمکنار کرانے کا مشن پارٹی نے ہاتھوں میں لیا ہے،اور پارٹی اس کیلئے کوئی بھی قربانی دینے کیلئے تیار ہے۔ ٹھاکر نے ترال کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس علاقے کو بدنام کیا گیا ہے،جس کے نتیجے میں ترال پسماندہ ہوکر رہ گیا۔الطاف ٹھاکر کا کہنا ہے کہ ترال  واحد علاقہ نہیں ہے جو جنگجوئت کے اعتبار سے حساس ہے،تاہم ترال کا کوئی اور ہی چہرہ لوگوں کے سامنے پیش کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اصل میں اسمبلی ممبران نے ترال کو پس پشت ڈال رکھا تھا،جس کی وجہ سے ترال کے لوگ سیاسی سرگرمیوں سے متنفر ہوگئے تھے،تاہم انہوں نے کہا کہ بی جے پی اس علاقے کی ترقی کیلئے کوشاں ہیں۔بی جے پی ترجمان نے بتایا کہ لوگوں کی تنہائی کو دور کرنے کی ضرورت ہے،اور انکی جماعت نے وزیر اعظم ہند کا’’سب کا ساتھ،سب کا وکاس اور سب کا وشواس‘‘ کا پیغام لوگوں تک پہنچایا،اس کو لوگوں نے قبول بھی کیا۔ الطاف ٹھاکر نے بتایا کہ ترال کے ڈادہ سرہ کو’’مڈ فری‘‘(کیچڑ سے پاک) کرنے کا تہیہ کیا گیا ہے،اور یہ معاملہ وزیر اعظم ہند نریندر مودی کی نوٹس میں بھی لایا گیا۔انہوں نے کہا کہ اس منصوبے میں ڈاڈہ سرہ کو دیگر علاقوں سے رابطہ سڑکوں سے جوڑا جائے گا۔ الطاف ٹھاکر نے دعویٰ کیا کہ جنوبی کشمیر میں صورتحال تبدیل ہورہی ہے اور لوگ تبدیلی چاہتے ہے۔انہوں نے کہا’’ جنوبی کشمیر میں اب  بھاجپا اور بی جے پی لیڈروں کے حق میں کھل کر دعائیں ہوتی ہیں۔‘‘