ترال میں اراضی مالک کا نزلہ طلاب پر گرا

ترال//کارملہ ترال میںاراضی فراہم کرنے کے بدلے سرکاری نوکری کا وعدہ پورا نہ کرنے کا نزلہ طالب علموں کو بھگتنا پڑا ۔ اراضی مالک نے سکول پر تالا چڑھایا جس کے باعث بچوںنے سرراہ تعلیم حاصل کرنا پڑی۔ کارملہ میں 10روزہ گرمائی تعطیلات ختم ہونے بعد جب طالب علم سکول میں داخل ہوئے تو اراضی مالک منظور احمدخان نے انہیں کلاسوں میں جانے سے روک دیا اور سکول پر تالا چڑھایا۔ سکول مقفل ہونے کے سبب طالب علموں کو کھلے میدان میں تعلیم حاصل کرنی پڑی جس سے والدین میں غم و غصہ کی لہر دو ڑ گئی۔ منظور خان کاکہنا ہے کہ اراضی فراہم کرتے وقت محکمہ نے اسے یہ وعدہ کیا تھا کہ کنبے کے ایک فرد کو مستقل سرکاری نوکری فراہم کی جائے گی تاہم 13سال گزرنے کے باوجود وعدے کو عملی جامہ نہیں پہنایا گیا جس کے بعد تنگ آکر سکول پر تالا چڑھانا پڑا۔ انچارج زونل ایجوکیشن افسر ترال غلام محمد کمار نے بتایا کہ مالک اراضی کے دو افراد بطور باورچی اور اسسٹنٹ کُک کو پہلے ہی تعینات کیا گیا ہے جبکہ انکا ایک رشتہ دار بحثیت چوکیدارکام کر رہا ہے ۔ مذکورہ آفیسر نے کہاکہ متعلقہ محکمے کو بھی اراضی مالک کے مطالبات کے حوالے سے آگاہ کیا گیا ہے ۔اس ضمن سے جب چیف ایجوکیشن افسر پلوامہ سے رابطہ قام کیا گیا ہے تو انہوںنے کہا کہ وہ  2مہینے کی چھٹی پرہیں۔