ترال معرکہ میں مقامی جیش کمانڈر مدثر خان جاں بحق، لاش وارثین کے حوالے

 

سرینگر/جیش محمد کے مقامی کمانڈر، مدثر خان کے رشتہ داروں نے سوموار کو ترال معرکہ میں جاں بحق ایک جنگجو کی شناخت کرلی۔

اس سے قبل پولیس نے اُن دو جنگجوئوں کی شناخت کیلئے ڈی ا ین اے پروفائلنگ کا فیصلہ کیا تھا جن کی لاشیں ترال معرکہ آرائی کے بعد بہت ہی خراب حالت میں بر آمد ہوئی تھیں  اور جن کی شناخت بہت مشکل ہورہی تھی۔

یہ معرکہ آرائی گذشتہ روز جنگجوئوں اور فورسز کے مابین جنوبی کشمیر کے پنلگش نامی علاقے میں پیش آئی جس کے دوران فوج کے مطابق تین جنگجو جاں بحق ہوگئے۔

مقامی ذرائع کے مطابق فورسز نے اُس مکان کو ہی زمین بوس کردیاتھا جس کے اندر جنگجو موجود تھے۔

 سرکاری ذرائع کے مطابق دو عدم شناخت لاشوں کے ڈی این اے کیلئے نمونے حاصل کرلئے گئے تھے تاہم مقامی جیش کمانڈر مدثر خان کے قریبی رشتہ داروں نے اُس کی شناخت کرلی جس کے بعد اُس کی لاش اُس کے وارثین کو سونپ دی گئی۔

مدثر  خان  کے  بارے  میں  دفاعی  ذرائع  کا  کہنا  ہے  کہ  وہ  لیتہ  پورہ  حملے  کا  ماسٹر  مائنڈ  تھا  جس  میں  چالیس  فورسز  اہکار  ہلاک  ہوئے  تھے۔

فوج کے ترجمان کرنل راجیش کالیا نے گذشتہ روز کہا تھا کہ پنگلش معرکہ آرائی کے دوران فورسز نے تین جنگجوئوں کو جاں بحق کردیا۔

سرکاری ذرائع کا تاہم کہنا ہے کہ ابھی تک جائے واردات سے صرف دو لاشیں ہی بر آمد ہوئی ہیں ۔