تحقیق کسی بھی اعلیٰ تعلیمی ادارے کی بنیاد | سنٹرل یونیورسٹی میں 2ہفتوں سے جاری ورکشاپ اختتام پذیر

سرینگر //ڈائریکٹوریٹ آف ریسرچ اینڈ ڈیولپمنٹ ، سنٹرل یونیورسٹی کشمیر کے زیر اہتمام بزنس اسٹڈیز ، سوشل سائنسز ، میڈیا اور لیگل اسٹڈیز کے شعبوں میں ریسرچ اسکالروں کیلئے دو ہفتوں سے جاری ’’ریسرچ میتھاڈالوجی ‘‘ورکشاپ بدھ کو یونیورسٹی کے گرین کیمپس میں اختتام پذیر ہوا۔اختتامی تقریب پر رجسٹرار پروفیسر ایم افضل زرگر ، فائنانس آفیسر پروفیسر فیاض احمد نکا، ڈائریکٹر آر اینڈ ڈی پروفیسر فاروق احمد شاہ ، ڈائریکٹر ڈیکاپروفیسر ولی محمد شاہ ، سابق ڈائریکٹر آر اینڈ ڈی ، پروفیسر جی ایم بٹ ، فیکلٹی ممبران اور ریسرچ اسکالر بھی موجود تھے۔ اس موقع پر موجودرجسٹرار پروفیسر ایم افضل زرگر نے ریسرچ اسکالروں کے ساتھ بات چیت کی اور کہا کہ یونیورسٹی مستقبل میں ایسے مزید پروگرام منعقد کرے گی تاکہ اسکالروں کی تحقیقی صلاحیتوں کو اپ گریڈ اور بہتر بنایا جا سکے۔ تحقیق کو کسی بھی اعلیٰ تعلیمی ادارے کی بنیاد قرار دیتے ہوئے پروفیسر زرگر نے کہا کہ یونیورسٹی تحقیق کے معیار پر کبھی سمجھوتہ نہیں کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ علماء کی جانب سے کی جانے والی تحقیق لازمی طور پر کمیونٹی کے لیے فائدہ مند ہونی چاہئے۔اس موقع پر پروفیسر فاروق اے شاہ نے کہا کہ یونیورسٹی میں ریسرچ سکالروں کی تعداد کئی گنا بڑھ گئی ہے اور آر اینڈ ڈی انہیں مناسب سہولیات فراہم کرنے کے لیے ہر ممکن کوشش کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا’’تحقیق کو آسان بنانے کے لیے آر اینڈ ڈی نئی تجاویز لے کر آرہا ہے‘‘۔ورکشاپ کے بارے میں انہوں نے کہا کہ ورکشاپ میں44 سیشن تھے ، جہاں سنٹرل یونیورسٹی ،کشمیر یونیورسٹی ، ٹاٹا انسٹی ٹیوٹ آف سوشل سائنسز ، اشوکا یونیورسٹی اور جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے ریسورس پرسنز نے تعاون کیا۔فائنانس آفیسر پروفیسر فیاض اے نکا نے کہا کہ اچھے تحقیقی طریقہ کار کو اپنانا معیاری تحقیق کا ایک اہم جزو ہے۔ انہوں نے کہا’’اس طرح کے ورکشاپوں کا انعقاد ریسرچ اسکالروں کو مناسب طریقہ کار کی شناخت میں مدد کرتا ہے ، جو بعد میں معیاری تحقیق کی بنیاد بنتی ہے‘‘۔ڈائریکٹر DIQA پروفیسر ولی محمد شاہ نے تحقیق میں بین الضابطہ نقطہ نظر اپنانے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے ورکشاپ کے انعقاد پر ڈائریکٹوریٹ آف ریسرچ اینڈ ڈیولپمنٹ کی تعریف کی۔سابق ڈائریکٹر آر اینڈ ڈی پروفیسر جی ایم بٹ نے اس طرح کے ورکشاپوں کے انعقاد کی اہمیت پر روشنی ڈالی اور کہا کہ کسی بھی شعبے میں تحقیق کرنے والے اسکالروں کو تحقیقی طریقہ کار میں استعمال ہونے والے ٹولز اور تکنیک سے اچھی طرح واقف ہونا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ تحقیق کی اخلاقی اقدار پر سختی سے عمل کرنا بھی ضروری ہے تاکہ معیاری تحقیق کی جاسکے۔ورکشاپ کوآرڈی نیٹر ڈاکٹر خالد وسیم حسن نے اختتامی کارروائی کی جبکہ بطور اسسٹنٹ پروفیسر شعبہ مینجمنٹ سٹڈیز انشا فاروق نے شکریہ کی تحریک پیش کی ۔ بعد ازاں رجسٹرار پروفیسر ایم افضل زرگر نے ریسرچ اسکالروں میں شرکت کی اسناد تقسیم کیں۔