تحقیق کا سماج تک پہنچانالازمی:پروفیسرنیلوفرخان

سرینگر//موسمیاتی تبدیلی اور تباہیوں کے خطرے کو کم کرنے کیلئے نوجوانوں اور بالغوں کو کام پر لگانے کیلئے کشمیریونیورسٹی میں پانچ روزہ ورکشاپ کاافتتاح وائس چانسلر پروفیسر نیلوفرخان نے کیا۔اس کااہتمام شعبہ سوشل ورک ،این ایس ایس اور نیشنل انسٹی چیوٹ آف ڈائزاسٹرمنیجمنٹ نے مشترکہ طور کیا ہے۔اپنے صدارتی خطاب میں وائس چانسلر نے کہا کہ کوئی بھی تحقیق کوئی تبدیلی نہیں لاسکتی اگر یہ سماج تک نہ پہنچے۔انہوں نے کہا کہ سائنس کو سماج کے ساتھ ہرشعبے میں منسلک کرنے کی ضرورت ہے تاکہ،تباہیوں کے انتظام وانصرام اور موسمیاتی تبدیلی سے متعلق موثر پالیسیاں اور پروگرام ترتیب دی جاسکیں۔انہوں نے اس ورکشاپ کااہتمام کرنے پرسوشل ورک شعبے کو مبارکباد دی ۔انہو ں نے ڈئزاسٹرمنیجمنٹ میں اسکول بچوں کو بھی شامل کرنے پرزوردیا تاکہ سماج میں اس سلسلے میں آگاہی پیداہو۔اس موقعہ پر اسلامک یونیورسٹی اونتی پورہ کے وائس چانسلر پروفیسرشکیل احمدرومشو نے نے کلیدی خطبہ دیا اورکہا کہ ہمیں تباہیوں کیلئے تیار ہونے کے کلچر کوفروغ دینا ہوگا۔انہوں نے ہمالیائی خطے میں نوجوان سماج میں اس حوالے سے بیداری لاکر بڑی تبدیلی لاسکتے ہیں۔