بہت کچھ سہا ،اب اور نہیں

 
سرینگر//پی ڈی پی کے باغی قانون ساز کونسل ممبر یاسر ریشی نے کہا ہے کہ ناراض ممبران میں اچانک طوفان نہیں آیابلکہ ان کے اندر کئی برسوں سے ناراضگی کا جولائوا بل رہا تھا وہ پھوٹ گیا۔ پی ڈی پی کی طرف سے ضلع صدر بانڈی پورہ سے فارغ کرنے کے بعد نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے یاسر ریشی نے پارٹی لیڈرشپ کو نشانہ بناتے ہوئے کہا ’’ سابق وزیر اعلیٰ اور انکے حواریوں نے نوجوان لیڈروں کی راہوں میں روڈے اٹکائے اور وہ انکے کام سے خائف ہوئے‘‘۔ان کا کہنا تھا کہ پارٹی کو ان لوگوں نے یرغمال بنا دیا تھا،جو از خود انتخابات میں نا مراد ہوچکے تھے۔یاسر کا کہنا تھا ’’اگر میں نے بدقسمتی سے میں الیکشن ہار گیا،پھر بھی32ہزار سے زائد ووٹ حاصل کئے‘‘۔یاسر ریشی نے کہا ’’مجھے قانون ساز کونسل کی رکنیت دیکر پارٹی کو لگ رہا تھا کہ ہم نے ان پر احسان کیا،اور میں پارٹی کی غلط پالسیوں کے خلاف کوئی بھی لب کشائی نہیں کرئونگا،بگر میرا ضمیر زندہ ہے،اور لوگوں کی فلاح کیلئے کوئی بھی قدم اٹھانے کیلئے ہمہ وقت تیار رہتا ہوں۔انکا کہنا تھا کہ انکے حلقہ انتخاب کے لوگوں کو بڑی امیدیں تھیںجبکہ علاقہ حاجن کے لوگ گزشتہ10برسوں سے ڈگری کالج کا مطالبہ کر رہے تھے،تاہم پارٹی کی اعلیٰ قیادت بشمول وزیر اعلیٰ کی نوٹس میں لانے کے علاوہ قانون ساز کونسل میں یہ معاملہ اٹھانے کے باوجود مطالبے کوخاطر میں نہیں لایا گیاجبکہ سمبل میں اسپتال کی تجدید و توسیع کے علاوہ لوگوں کے روز مرہ کے مسائل کو نظر انداز کیاگیااورپارٹی نے اپنی ہی لوگوں میں بے آبرو کردیا۔