بھدرواہ میں آفیسران پر تاناشاہی کاالزام، پنچایتی اراکین کا احتجاج

ڈوڈہ// بھدرواہ پنچائتی نمائندوں نے پولیس وانتظامیہ مخالف نعرہ بازی کرتے ہوئے الزام عائد کیا کہ کچھ آفیسران کی تانا شاہی کی وجہ سے عوام پریشان ہے ۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سرپنچ ساجد میر نے دیگر پنچائتی اراکین کی موجودگی میں میڈیا نے سے مخاطب ہوتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ایل جی کے مشیر کے دورے کے دوران انہوں نے ایس او پیز پر عمل درآمد کرتے ہوئے اپنی مانگ کو پر امن طریقے سے ایڈوائزر کے سامنے رکھا تھا جس میں کلشاڑی سڑک و کیندریہ ودیالیہ اسکول اہم معاملات شامل تھے۔میر نے کہا کہ ان مسائل کو لے کر اس سے پہلے متعدد بار ضلع وصوبائی انتظامیہ کی نوٹس میں لایا تھا تاہم کوئی شنوائی نہیں ہوئی۔انہوں نے کہا کہ انتظامیہ کی تاناشاہی کے بعد انہوں نے شاہراہ پر کرسیاں لگائی اور صرف پندرہ منٹ کے لئے ٹریفک معطل رہا۔میر نے کہا کہ ایڈوائزر نے ہمارے مطالبات غور سے سنے اور ان کو حل کرنے کا یقین دلایا لیکن دوسرے معلوم ہوا کہ چار سرپنچوں کے خلاف ایف آئی آر درج کیا گیا۔پنچائتی اراکین نے کہا کہ سرکار نے پنچائتی راج کو مستحکم بنانے میں پہلی حکومتوں سے بہتر رول نبھایا لیکن زمینی سطح پر آفسر شاہی اس میں رکاوٹ بن رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ ایس ایچ او بھدرواہ و دپروبشنر آفسیران کا رویہ پنچائتی اراکین کے ساتھ غیر تسلی بخش رہا۔انہوں نے کہا کہ وہ عوام کی طرف سے چنے گئے نمائندے ہیں اور ان کے ساتھ غیر اخلاقی برتاﺅ کرنا ناقابل برداشت ہے۔پنچائتی اراکین نے پروبشنر سب انسپکٹروں پر الزام عائد کیا انہوں نے علاقہ میں رشوت خوری کو فروغ دیا ہے اور بد امنی پھیلانے میں ملوث ہیں۔انہوں نے کہا کہ عوام کی خاطر وہ کوئی بھی سزا بھگتنے کے لئے تیار ہیں۔انہوں نے کہا کہ پنچائتی نظام کو مضبوط بنانے کے لئے جموں وکشمیر میں کروڑوں روپے خرچ کئے جاچکے ہیں لیکن بھدرواہ میں پنچائتی اراکین کے مخالف انتظامیہ کام کررہی ہے۔انہوں نے ایل جی انتظامیہ ،آئی جی پی و ایس ایس پی ڈوڈہ سے ایس ایچ او بھدرواہ واس کے ماتحت آفیسران کے خلاف سخت کاروائی عمل میں لا کر فی الفور تبادلہ کیا جائے۔انہوں نے انتباہ کیا کہ اگر ان کے خلاف کاروائی نہیں کی گئی تو وہ استعفی پیش کریں گے۔سرپنچ ساجد میر نے کہا کہ پولیس کے اعلی آفیسران کا ہمیشہ ان کے ساتھ اچھا تال میل رہا ہے تاہم تھانہ پولیس بھدرواہ میں ایس ایچ او و پروبشنر سب انسپکٹر وں نے دہشت مچا رکھی ہے اور بلاجواز سرپنچوں کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پنچائتی نظام کو کمزور کرنے کی کسی بھی آفسیر کو اجازت نہیں دی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ مذہب وملت لوگو ں کی انہیں حمائت حاصل ہوئی ہے اور خطہ چناب کے کونہ کونہ سے سیول سوسائٹی نے انتظامیہ کے اس رویہ کی مذمت کی ہے ہم ان کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔سرپنچ و سیاسی کارکن شبیر احمد خان نے اس موقع پر بولتے ہوئے کہا کہ جمہوریت میں پر امن طریقے سے اپنی رکھنے کا ہر شہری کو حق حاصل ہے اور عوامی مسائل کو ارباب اقتدار تک پہنچانا پنچائتی اراککین کی ذمہ داری ہے۔خان نے ایف آئی آر درج کرنے کی مذمت کرتے ہوئے اس سے جمہوریت کے خلاف قدم قرار دیا۔انہوں نے کہا کہ پنچائتی اراکین ان سایف آئی آر میں درج سرپنچوں کے ساتھ
 گرفتاری دینے کے لئے تیار ہیں۔انہوں نے کہا کہ یہ حال پنچائتی اراکین کے ساتھ ہے عام لوگوں کے ساتھ ان کا کیا رویہ رہتا ہے اپ اس سے بخوبی اندازہ لگا سکتے ہیں۔اس موقع پر یاسر خان ،شبیر احمد خان ،راجو ڈار،جاوید قاضی ودیگر کئی پنچائتی اراکین موجود تھے۔