بھاجپا نے محض کھوکھلے وعدے کئے،عوام کی مشکلات میں اضافہ کیا: رتن لال گپتا بھرتی عمل دھاندلیوں اور بے ضابطگیوں کا شکار، بے روزگاری میں حد درجہ اضافہ

آر ایس پورہ// جموں و کشمیر نیشنل کانفرنس نے ہفتہ کو بھارتیہ جنتا پارٹی کی مرکزی حکومت پر الزام لگایا کہ وہ کھوکھلے وعدے کرکے اور زمینی طور پر کچھ نہیں کر کے سرحدی علاقوں میں رہنے والے لوگوں کو بے پناہ مصائب پہنچا رہی ہے۔صوبائی صدر جموں رتن لال گپتا نے سرحدی قصبہ آر ایس پورہ کے گاؤں بگا جانا میں ایک جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی حکومت/یو ٹی حکومت سرحدی باشندوں کے ساتھ کئے گئے وعدوں کو پورا کرنے میں ناکام رہی ہے اور اس کی وجہ سے حالات بد سے بدتر ہو گئے ہیں۔ مرکز/یوٹی میں بی جے پی کی قیادت والی حکومت کی کھوکھلی پالیسیوں کی وجہ سے باشندوں کو کئی طرح کی مشکلات درپیش ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہاں کے لوگ زیادہ تر کاشتکار طبقے سے تعلق رکھتے ہیں اور اپنی آبپاشی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے مکمل طور پر بجلی پر انحصار کرتے ہیں لیکن اقتدار پر بیٹھے لوگوں نے شاذ و نادر ہی خیال رکھا ہے جس کی وجہ سے یہ ہنگامی صورتحال پیدا ہو گئی ہے جہاں بجلی کی کٹوتی ایک نیا معمول ہے اور ٹرانسفارمرز کو نقصان روز کا کام ہے۔ اس کے علاوہ نیچے پڑی بجلی کی تاروں سے لوگوں اور یہاں تک کہ مویشیوں کی زندگیوں کو بھی خطرہ ہے۔رتن لال نے کہا کہ پی ایم مودی کے دور حکومت میں کسان سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کسانوں کو بیج / کھاد کی شدید قلت سمیت پیچیدہ مسائل کا سامنا ہے۔ انہوں نے یہ دعویٰ کرتے ہوئے ٹیوب ویلوں کو چالو کرنے کا بھی مطالبہ کیا کہ نہریں بند ہونے اور پانی کی عدم دستیابی کی وجہ سے کسانوں کو پریشانی کا سامنا ہے۔ انہوں نے کسان برادری کو دی جانے والی تقریباً تمام سبسڈی واپس لینے پر حکومت پر تنقید کی۔سینئر این سی لیڈر نے سرحدی پٹی کے نوجوانوں کو نظر انداز کرنے پر مرکز اور جموں و کشمیر میں حکومتوں پر مزید نکتہ چینی کی۔ انہوں نے ایل جی انتظامیہ پر الزام لگایا کہ وہ سرحدی نوجوانوں کے ساتھ امتیازی رویہ اپنا رہی ہے جس کے پاس کوئی روزگار کی پالیسی یا کسی قسم کے ترقیاتی منصوبے نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی/یوٹی حکومت نے بارڈر بٹالین کو بڑھانے کا وعدہ کیا تھا لیکن ہمیشہ کی طرح بدعنوان حکومت نے جموں و کشمیر پولیس بارڈر بٹالین کی 2 بارڈر بٹالین کے نتائج کو حکومت کی بے حسی کی مثال قرار دیتے ہوئے منسوخ کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اپنا مستقبل تاریک پاتے ہوئے یہ بے روزگار نوجوان سراسر مایوسی اور مایوسی کے دور سے گزر رہے ہیں۔ صوبائی صدر نے جموں و کشمیر کے مختلف سرکاری محکموں میں منظور شدہ خالی اسامیوں کو پر کرنے میں ناکامی پر موجودہ حکومت پر برہمی کا اظہار کیا۔ انہوں نے جموں و کشمیر میں مقامی لوگوں کے لیے سرکاری ملازمتوں کے تحفظ کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ حالیہ برسوں کے دوران بے روزگاری میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔ سرکاری ملازمتیں صرف مقامی نوجوانوں کے لیے مخصوص ہونی چاہئیں کیونکہ ریاست کے پاس روزگار کے محدود راستے ہیں۔