بھاجپا نے خواتین کی فلاح و بہبود کیلئے کچھ نہیں کیا نیشنل کانفرنس خواتین کی با اختیاری میں یقینی رکھتی ہے :رتن لال گپتا

عظمیٰ نیوز سروس

ادھم پور//جموں و کشمیر نیشنل کانفرنس (جے کے این سی) کے صوبائی صدر رتن لال گپتا نے اس بات کا اعادہ کیا ہے کہ نیشنل کانفرنس خواتین کو بااختیار بنانے کیلئے پرعزم ہے اور یہ موقف سابقہ ریاست جموں و کشمیرمیں این سی حکومت کے اٹھائے گئے اقدامات سے ثابت ہوتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پارٹی کے ایک روزہ خواتین کنونشن سے اپنے خطاب میں کیا۔ ایک روزہ کنونشن کا اہتمام سنیل ورما، ضلع صدر جے کے این سی ادھم پور نے کیا تھا اور میٹنگ کی صدارت سنیتا مہرا، ضلع صدر جے کے این سی خواتین ونگ ضلع ادھم پور نے کی۔اس موقع پر رتن لال گپتا مہمان خصوصی تھے جبکہ عبدالغنی ملک سینئر این سی لیڈر اور سابق وزیر مہمان خصوصی تھے۔رتن لال گپتا نے کہا کہ خواتین کو بااختیار بنانے کے عزم کو برقرار رکھتے ہوئے نیشنل کانفرنس نے پارلیمنٹ میں خواتین ریزرویشن بل کی حمایت کی۔ انہوں نے کہا کہ نیشنل کانفرنس نے ہمیشہ خواتین کو سیاسی، معاشی اور سماجی طور پر ترقی کرنے کا پلیٹ فارم فراہم کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر فاروق عبداللہ کے وزیر اعلیٰ کے دور میں ہی ان کی حکومت نے جموں و کشمیر کی بیٹیوں کے لئے میڈیکل کالجوں میں 50 فیصد میڈیکل سیٹیں مختص کی ہیںسینئر این سی لیڈر نے کہا کہ پارٹی ہر سطح پر خواتین کی برابری کو یقینی بنانے کے لئے پرعزم ہے چاہے وہ سیاسی، تعلیمی، اقتصادی، تکنیکی یا سماجی بااختیار ہو اور وہ جموں و کشمیر کی خواتین کے خلاف امتیازی سلوک اور تعصب کے مسائل کو اٹھاتی رہے گی۔ انہوں نے مرکز میں موجودہ بی جے پی حکومت اور مرکزی زیر انتظام انتظامیہ پر الزام لگایا کہ انہوں نے خواتین کے لئے کچھ نہیں کیا سوائے محض زبان کی خدمت فراہم کرنے کے جس کی وجہ سے جموں و کشمیر کی خواتین موجودہ حکومت کے دوران سب سے زیادہ متاثر ہوئی ہیں۔معاشرے کی تقدیر کی تشکیل میں خواتین کے بڑے کردار کے لئے آواز اٹھاتے ہوئے، سابق وزیر اور زونل صدر ادھم پور ریاسی، عبدالغنی ملک نے کہا کہ جمہوری اداروں میں ان کی موجودگی اس مرکز کے زیر انتظام علاقے کی خواتین کے لئے تبدیلی کے بہترین اتپریرک کے طور پر کام کر سکتی ہے۔سینئر این سی لیڈر اور سابق ایم ایل اے بملہ لوتھرہ نے اپنے خطاب میں موجودہ حکومت کی تمام محاذوں پر ناکامی کی سخت مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ تمام سطحوں پر بدعنوانی اور اقربا پروری کی وجہ سے سرکاری اسکیموں کے فائدے مستحق غریب خواتین تک نہیں پہنچ رہے ہیں اور جموں و کشمیر یونین ٹیریٹری میں اس ناگفتہ بہ حالت کی مکمل اور مکمل طور پر ذمہ دار حکومت ہے۔