بھاجپاکارکنوں کا بلاک سطح پرانتظامیہ کیخلاف احتجاج

 کشتواڑ//بھارتیہ جنتا پارٹی کے لیڈروں وکارکنوں نے آرایس لیڈرچندرکانت شرمااوربی جے پی لیڈرانیل پریہاراوراس کے بھائی کے قاتلوں کی جلدگرفتاری کی مانگ کرتے ہوئے کشتواڑکی مختلف بلاکوں بشمول پاڈر ، گالی گٹھ ، مغلمیدان ،پلماڑ ، ٹھاٹھری ، تریگام وغیرہ میں بلاک سطح پرتین گھنٹوں کادھرنادیا۔اس دوران مظاہرین ایس ایس لیڈر چندر کانت شرما و بی جے پی لیڈر انیل پریہار و ان کے بھائی کے قاتلوں کی جلد از جلد گرفتاری کا مطالبہ کر رہے تھے۔ کشتواڑ میں  ڈاک بنگلہ کے باہراحتجاج کررہے مظاہرین میں سابقہ وزیر و سابقہ ایم ایل اے کشتواڑ سنیل کمار شرما ،پارٹی کے ضلع صدر پردیپ پریہار ،یوا مورچہ کے سٹیٹ جنرل سکریٹری آشیش شرما ، پارٹی کے سینر لیڈر حکم چند و  دیگر سینر لیڈران و خواتین کارکنان شامل تھے۔ اس موقع پر بولتے ہوے سابقہ وزیر و سابقہ ایم ایل اے کشتواڑ سنیل کمار شرما نے  ضلع انتظامیہ و پولیس کو  ٓڑے ہاتھوں  لیتے ہوئے کہا کہ اتنا وقت گزر گیا لیکن ضلع کی پولیس قاتلوں اوران کی مددکرنے والوںکی پہچان نہیں کرسکی ہے۔جس کی وجہ سے ہندو طبقہ میں انتظامیہ کے خلاف غم و غصہ پایاجارہاہے۔انھوں نے ضلع انتظامیہ کوخبردار کرتے ہوئے کہا کہ قاتلوں کو جلد از جلد  پکڑا جائے تاکہ آئندہ کوئی ایسا واقعہ رونما نہ ہو۔  انھوں  1990 کاذکر کرتے ہوئے کہا کہ تب سے کشتواڑ میں ایک ہی طبقہ کو ہراساں کرنے  کے حالات بنائے جارہے ہیںجب  ملی ٹینٹوں نے دن دھاڑے  ستیش بھنڈاری کا سر عام قتل کیا تھا جبکہ 1993 میں ہستی کے مقام پر ایک ہی طبقہ کے 16 لوگوں کوگاڑی سے اتار کر ہلاک کیاتھا۔جبکہ کچھ عرصہ پہلے پھرسے ایسی کوشش کرکے پریہار بردران و چندر کانت شرما کا قتل کر دیا گیا۔انھوں نے کہا کہ اگر ان کے قاتلوں کو پولیس نے جلد از جلد  نہ پکڑا گیاتو احتجاج میں مزید شدت لائی جائے گی اور پھر ضلع سطح پر ہی نہیں بلکہ ریاستی سطح پر بھی احتجاج کیا جائیگا۔ انھوں نے الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ انتظامیہ میں کچھ ایسے بھی   لوگ ہیں جو تنخواہ تو ہماری لیتے ہیں لیکن وہ کام شرپسند عناصر کے لیے کرتے ہیں اور یہاں کا ماحول و بھائی چارہ خراب کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔انھوں نے  ہندو سماج کوایک جٹ ہوکر ان شرپسند عناصر سے لڑنے پر زور دیا۔