بڈگام سے مضافات کو جانے والی پبلک ٹرانسپورٹ گاڑیاں سرشام ہی غائب | سوموڈرائیوروں کا ازخود کرایہ میں اضافہ،مسافر پریشان

بڈگام//بڈگام کے مضافات کو جانے والا پبلک ٹرانسپورٹ اندھیرا چھانے سے پہلے ہی سڑکوں سے غائب ہوجاتا ہے جس کی وجہ سے ہزاروں افراد کو منزل مقصود تک پہنچنے میں کافی دشواریاں پیش آتی ہیں جبکہ کئی علاقوں کو جانے والی سومو سروس ڈرائیوروں نے از خود کرایہ میں من مانی طریقے سے اضافہ کرکے مسافروں پر بوجھ ڈال دیا۔اس سلسلے میں درجنوں افراد نے کشمیر عظمی کو بتایا کہ بڈگام سے ملحقہ علاقوں جن میں شولی پورہ،بیروہ ،لال پورہ، شوگہ پورہ،اچھگام،چاڈورہ ،بڈگام چھون،پوشکر پھاگ،خانصاحب ،بڈگام بیروہ ،سمیت دیگر علاقوں کو جانے والا پبلک ٹرانسپورٹ سر شام ہی سڑکوں سے غائب ہوجاتا ہے جس کے نتیجے میں ان علاقوں کو جانے والے سینکڑوں لوگوں کو گھر واپس پہنچنے میں کافی دشواریاں پیش آتی ہیں۔متعدد افراد کئی مرتبہ رشتہ داروں اور دوستوں کے گھروں میں قیام کرنے پر مجبور ہوجاتے ہیںجبکہ ان علاقوں کو جانے والی سومو سروس ڈرائیوروں نے کرایہ میں من مانی طریقے سے اضافہ کرکے طلباء سمیت دیگر شہریوں پر اضافی بوجھ ڈال دیا ہے۔محمد اشرف ڈار نامی شہری نے کشمیر عظمی کو بتایا کہ سرکاری ملازمین،تجارت پیشہ افراد اور طلباء  جو سرینگر یا بڈگام پڑھائی کے سلسلے میں روزانہ جاتے رہتے ہیں ،کو شام کو گھر پہنچنے میںگوناگوں مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہیں کیونکہ پبلک ٹرانسپورٹ نماز مغرب سے قبل ہی سڑکوں سے غائب ہوجاتا ہے۔ادھر سومو گاڑیوں کے ڈرائیوروں نے از خود کرایہ میں اضافہ کردیا ہے۔اس بارے میں جب محکمہ موٹر ویہکلز کے اسسٹنٹ ریجنل ٹرانسپورٹ آفیسر بڈگام جمشید چوہدری سے کشمیر عظمی نے رابطہ کیا، تو انہوں نے کہا کہ میں ذاتی طور پر سرشام ہی سڑکوں سے پبلک ٹرانسپورٹ غائب ہونے کا جائزہ لوںگا جبکہ سومو ڈرائیوروں کی جانب سے اضافی کرایہ وصول کرنے کی شکایت ہمارے پاس بھی موصول ہوئی ہے جس کے تحت ہم نے جنوری کے مہینے میں 68 سومو گاڑیوں کے روٹ پرمٹ ایک ماہ کے لئے ضبط کرلئے ہیں،جن کے خلاف باضابطہ کارروائی ہوگی ۔