بمنہ میں بچوں کے خصوصی اسپتال

 سرینگر // گورنمنٹ میڈیکل کالج سرینگر کا شعبہ امراض اطفال آج یعنی منگل سے بمنہ میں قائم بچوں کے خصوصی اسپتال میں اضافی او پی ڈی خدمات کا آغاز کررہا ہے۔جی ایم سی میں امراض اطفال کے سربراہ ڈاکٹر مظفر جان نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ’’ جی بی پنتھ اسپتال میں معمول کے مطابق او پی ڈی خدمات جاری ہیں اور اس کے علاوہ مریضوں کی راحت کیلئے بمنہ اسپتال میں بھی اضافی او پی ڈی خدمات شروع کرنے کا فیصلہ کیا گیاہے جو منگل سے شروع ہونگی‘‘۔ڈاکٹر  جان نے بتایا کہ ابتدائی طور پر یہاں 4ڈاکٹر تعینات رہیں گے ۔ 114کروڑ 81لاکھ روپے کی لاگت سے تعمیرکئے گئے 500بستروں پر مشتمل بچوںکے خصوصی اسپتال پرپچھلے 8سال سے کام جاری ہے اور ابھی بھی بلڈنگ کو مکمل ہونے میں 2ماہ کا وقت لگ سکتا ہے۔انچارج پرنسپل گورنمنٹ میڈیکل کالج ڈاکٹر تنویر مسعود نے بتایا ’’ بلڈنگ کی تعمیر کا کام آخری مراحل میں ہے اور آئندہ دو ماہ کے دوران اسے کالج کے حوالے کردیا جائے گا‘‘۔یہ بات قابل ذکر ہے کہ سال 2013میں نیشنل کانفرنس کی سابق سرکار نے بمنہ  میں 200بستروں پر مشتمل بچوں کے خصوصی اسپتال کی تعمیر کو منظوری دی تھی لیکن 17اکتوبر 2015کو اسوقت کے وزیر اعلیٰ مفتی سعید نے اسپتال میں مزید 300بستروں کا اضافہ کرنے کا فیصلہ کیا ۔ سال 2019میںجموں و کشمیر سرکار نے اسپتال میں مزید 300بستروں کا اضافہ کیا ۔