برکینافاسو میں فوج اقتدارپرقابض

لندن //افریقی ملک برکینا فاسو میں فوج نے صدر روچ مارک کرسچن کابور کی حکومت کا تختہ الٹ کر اقتدار پرقبضہ کرلیا ہے۔غیرملکی میڈیا کے مطابق اقتدارسنبھالنے کے بعد فوج کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ برکینا فاسوکی حکومت اورپارلیمنٹ کو تحلیل کردیا گیا ہے اورملک کی تمام سرحدیں بند کردی گئی ہیں۔بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ مناسب وقت پرآئینی نظام کی طرف واپس جایا جائے گا۔ فوج کی زیرحراست تمام افراد محفوظ مقام پرہیں۔بیان میں صدر روچ مارک کرسچن کابورکے بارے میں کچھ نہیں بتایا گیا۔ادھرآسٹریلیا کی حکومت نے منگل کو قبائلی پرچم کا کاپی رائٹ خرید لیا۔شناخت کی اس علامت کو آزاد کرنے کے لیے حکومت نے اس کا کاپی رائٹ 2 کروڑ قیمت سے زیادہ میں خریدا۔یہ جھنڈا مقامی مصور ہیرالڈ تھامس نے 1971 میں احتجاج کی علامت کے طور پر بنایا تھا۔ کئی قبائلیوں نے شکایت کی تھی کہ اس جھنڈے کی تصویر پر کاپی رائٹس ظاہر کرتی ہے جس کی وجہ سے وہ اسے استعمال کرنے سے محروم ہیں۔