بدھل کی متعدد پنچایتیں صاف پانی سے محروم | لوگ اس جدید دور میں بھی قدرتی چشموں پر دربدر

کوٹرنکہ //سب ڈویژن کوٹرنکہ کے بدھل بلاک میں اس جدید دور میں بھی کئی پنچایتیں ایسی ہیں جہاں پر پینے کا صاف پانی نہ ہونے کی وجہ سے مقامی لوگ اپنا زیادہ تر وقت قدرتی چشموں پر ضائع کرتے ہیں جبکہ اس عمل کیلئے ان کو کئی کلو میٹر کی پیدل مسافت بھی طے کر نا پڑتی ہے ۔بدھل نیو کی پنچایت حلقہ شاہپور کی عوام نے محکمہ آب رسانی و ضلع انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ علاقہ میں پانی کی شدید قلت کی وجہ سے ان کو شدید مشکلات کا سامنا کرناپڑرہا ہے جبکہ پنچایت حلقہ موڑا لچھیل کے لوگوں نے انتظامیہ مخالف احتجاج کرتے ہوئے کہاکہ اس جدید دور میں بھی ان کو بنیادی سہولیات دستیاب نہیں ہیں ۔انہوں نے کہاکہ حکومت مکینوں کو بنیادی سہولیات بالخصوص ہر ایک گھر میں پینے کا صاف پانی فراہم کرنے کے دعدئے کررہی ہے لیکن بدھل کے پسماندہ دیہات میں صورتحال اس وقت بھی قدیم طرز کی ہی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ 2008میں دریائے انس سے علاقہ کو پانی کی سپلائی کیلئے ایک لفٹ سکیم کا سنگ بنیاد رکھا گیا تھا لیکن 13برسوں بعد بھی اس سکیم پر کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ۔مکینوں نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ محکمہ جل شکتی کے زیر تحت شروع کر دہ جل جیون مشن مکمل طور پر ناکام ہو گیا ہے جس کی وجہ سے عوامی مشکلات میں بھی مزید اضافہ ہو گیا ہے ۔مقامی لوگوں نے مانگ کرتے ہوئے کہا کہ دیہات میں پینے کا صاف پانی ترجیح بنیادوں پر دستیاب کیا جائے ۔