بجٹ2021-22ایک نظر میں

نئی دہلی // یو این آئی//  وزیر خزانہ نرملا سیتارمن نے پیر کو پارلیمنٹ میں مالی سال 2021-22 کا عام بجٹ پیش کردیا ہے ، جس کی اہم خصوصیات مندرجہ ذیل ہیں: 
… بجٹ میں صحت اور فلاح و بہبود کے لئے 223846 کروڑ روپے کے اخراجات کے التزامات۔
 …}کووڈ ۔19 ویکسین کے لئے 35000 کروڑ روپے 
…} نیوموکوکل ویکسین پورے ملک میں دی جائے گی ، تاکہ ہر سال 50000 بچوں کی اموات کو روکا جاسکے ۔
…}۵ برسوں میں جل جیون مشن (شہری) کے لئے 287000 کروڑ روپے الاٹ۔
…}پانچ سال کی مدت میں شہری سوچھ بھارت مشن 2.0 کے لئے 141678 کروڑ روپے الاٹ۔
…}ذاتی گاڑیوں کے لئے 20 سال اور تجارتی گاڑیوں کے لئے 15 سال فٹنیس لینے کی ضرورت ۔
…}علاقوں میں پی ایل آئی اسکیم کے لئے اگلے پانچ برسوں میں 1.97 لاکھ کروڑ روپے کا الاٹمنٹ ۔
…}تین سال کے عرصے میں سات ٹیکسٹائل پارکس قائم کئے جائیں گے ۔
…}نیشنل ہائی وے کے 11000 کلومیٹر طویل کوریڈور مارچ 2022 تک مکمل ہوجائیں گے ۔
…}مالی سال 2022 میں زرعی قرضوں کا ہدف 16.5 لاکھ کروڑ روپے کردیا گیا 
…}معیار کے لحاظ سے 15000 سے زیادہ اسکولوں میں بہتری لائی جائے گی۔
…}غیر سرکاری تنظیموں ، نجی اسکولوں اور ریاستوں کے اشتراک سے 100 نئے سینک اسکول قائم کیے جائیں گے ۔
…}ہندوستان ہائیر ایجوکیشن کمیشن کے قیام کا فیصلہ۔
…}بجٹ میں 75 سال یا اس سے زیادہ عمر کے بزرگ شہریوں کے لئے انکم ٹیکس سے استثنیٰ۔
…}مقدمات کو دوبارہ کھولنے کے لئے وقت کی حد کو چھ سال سے کم کرکے تین سال کردیا گیا۔
 …}نیشنل فیس لیس انکم ٹیکس اپیلٹ ٹربیونل سنٹر کے قیام کا اعلان۔
…}سستے مکان خریدنے کے لئے قرض پر 1.5 لاکھ روپے تک کے سود میں چھوٹ کی مدت 31 مارچ 2022 تک بڑھا دی گئی۔
…}ایک کروڑ مزید مستفید افراد کو شامل کرنے کے لئے اُجولا اسکیم میں توسیع کرنے کا فیصلہ
…}آئندہ تین برسوں میں 100 سے زائد اضلاع کو ‘سٹی گیس ڈسٹری بیوشن نیٹ ورک’ سے منسلک کرنے کا فیصلہ۔
…}انشورنس کمپنیوں میں قابل اجازت ایف ڈی آئی کی حد 49 فیصد سے بڑھا کر 74 فیصد کرنے کا فیصلہ۔
…}ڈیٹا تجزیہ ، مصنوعی ذہانت مشین ، تعلیم سے تیار ایم سی اے 21 ورژن 3.0 کی شروعات۔
…}چارجر پارٹس اور موبائلز کے کچھ دوسرے حصوں پر درآمداتی ڈیوٹی میں چھوٹ ختم کردی گئی۔
…}موبائل کے کچھ حصوں پر فیس صفر سے بڑھا کر 2.5 فیصد کردی گئی ہے ۔
…}غیر معدنی ،معدنی پر ڈیوٹی چھوٹ ، 31 مارچ 2022 تک اور سٹینلیس سٹیل کی مختصر ، فلیٹ اور لمبی مصنوعات پر 7.5 فیصد اسٹیل سکرایپ۔
…}سونے اور چاندی پر کسٹم کے نرخوں کو معقول قرار دیا جائے گا۔
…}پردھان منتری غریب کلیان یوجنا کے تحت 2.76 لاکھ کروڑ روپے کا التزام۔
…}سرمایہ کشی سے 175000 کروڑ روپے حاصل کرنے کا ہدف۔
…}پانچ برسوں میں 50000 کروڑ روپے کی لاگت سے پورے تحقیقی نظام کو مستحکم کرنے کا فیصلہ۔
…}قومی زبان ترجمہ مشن (این ٹی ایل ایم) کا آغاز۔
 
 
بجٹ پر سیاسی جماعتوں ، مزدور تنظیموں ، صنعت کاروں کا ملا جلا رد عمل 
گاؤں اور کسانوں کو مرکز میں رکھ کر بجٹ بنایا گیا