بجلی کی پیداوار پر ٹیکس/ڈیوٹی عائد نہ کریں | مرکزکاریاستی حکومتوں کو حکم پیدواری ٹیکس کااطلاق غیر آئینی

عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر//مرکزی حکومت نے ریاستوں سے کہا ہے کہ ان کے پاس کسی بھی ذریعہ سے پیدا ہونے والی بجلی پر کوئی ٹیکس یا ڈیوٹی لگانے کا اختیار نہیں ہے – کوئلہ، ہائیڈرو، ہوا یا شمسی توانائی،اس طرح کا کوئی بھی ٹیکس غیر قانونی اور غیر آئینی ہے۔مرکزی وزارت بجلی نے 25 اکتوبر کو ایک سرکیولر میں کہا کہ یہ مرکزی حکومت کے نوٹس میں آیا ہے کہ کچھ ریاستی حکومتوں نے ترقیاتی مفت/چارج/فنڈ کی آڑ میں مختلف ذرائع سے بجلی کی پیداوار پر اضافی چارجز عائد کیے ہیں۔سرکیولرمیں کہا گیاہے کہ “بجلی کی پیداوار پر کسی بھی ٹیکس/ڈیوٹی کی شکل میں اس طرح کے اضافی چارجز/فیس، جس میں ہر قسم کی جنریشن یعنی تھرمل، ہائیڈرو، ونڈ، سولر، نیوکلیئر وغیرہ شامل ہیں، غیر قانونی اور غیر آئینی ہے۔ وزارت نے کہا کہ ٹیکس/ڈیوٹیز لگانے کے اختیارات خاص طور پر VII شیڈول میں بیان کیے گئے ہیں۔اس میں بجلی کی پیداوار پر کوئی ٹیکس یا ڈیوٹی عائد کرنے کا اختیار شامل نہیں ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ ایک ریاست کی حدود میں پیدا ہونے والی بجلی دوسری ریاستوں میں استعمال کی جا سکتی ہے اور کسی بھی ریاست کو یہ اختیار نہیں ہے کہ وہ دوسری ریاست کے رہائشیوں پر ٹیکس/ڈیوٹی لگائے۔ وزارت نے مزید کہا کہ آئین کا آرٹیکل 286 واضح طور پر ریاستوں کو اشیاء یا خدمات کی فراہمی یا دونوں پر کوئی ٹیکس/ڈیوٹیز عائد کرنے سے منع کرتا ہے، جہاں سپلائی ریاست سے باہر ہوتی ہے۔نیز، آرٹیکل287 اور 288 مرکزی حکومت کے ذریعہ استعمال کی جانے والی یا حکومت یا اس کی ایجنسیوں کے ذریعہ استعمال کے لئے مرکزی حکومت کو فروخت کی جانے والی بجلی کی کھپت یا فروخت پر ٹیکس عائد کرنے سے منع کرتے ہیں۔