بجلی خریدنا مجبوری یا متواتر حکومتو ں کی ناکامی؟ ۔76برسوں میں کشمیر میںصرف 254میگاواٹ بجلی پیدا کی جا سکی ، موسم سرما میں بند ہونے والے پروجیکٹ بنائے گئے

اشفاق سعید

سرینگر //گزشتہ76برسوں میں سرکار یہاں کے پانیوں سے صرف 254.1میگاواٹ صلاحیت والے بجلی پروجیکٹوں کی تعمیر مکمل کر سکی ہے۔ جو سرما میںٹھپ ہوجاتے ہیںاور لوگوں کو اندھیرے میں رہنا پڑتا ہے۔ محکمہ یہ دلیل دے رہا ہے کہ وہ بجلی مہنگے داموں خریدنے پر مجبور ہے اور اس کا نزلہ عام صارفین پر ڈال کر انہیں نہ صرف بجلی چوری بلکہ فیس کی ادائیگی میں تاخیر کا الزام لگا کر بجلی بند کر دیتے ہیں ۔

 

جموں وکشمیر میں صارفین کو 24گھنٹے بجلی فراہم کرنے کے سرکاری دعویٰ کے بیچ اس بات کا انکشاف ہوا ہے کہ سرکار وادی میں بجلی پیداوار میں اضافہ کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے کیونکہ کشمیر پاور ڈیولپمنٹ کارپوریشن کے جو بجلی پروجیکٹ وادی میں قائم ہیں وہ 254.1میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں جبکہ سرما کے موسم میں ان بجلی پروجیکٹوں کی پیداواری صلاحیت گھٹ کر صرف 50میگاواٹ سے بھی کم رہ جاتی ہے۔ اس کے علاوہ وادی میں بجلی سپلائی کو بہتر بنانے کیلئے سرکار نے برسوں پہلے جن تین بڑے منصوبوں مہورا ، نیو گاندربل اور کرناہ کی تعمیر کو منظوری دی تھی ان میں سے صرف کرناہ 12میگاواٹ بجلی پروجیکٹ پر کام چل رہا ہے باقی دو بڑے منصوبے کاغذات میں ہی دیکھے جا رہے ہیں ۔کشمیر میں جو بجلی پروجیکٹ اس وقت قائم ہیں ان میں لور جہلم 105میگاواٹ ،اپرسندھ( فسٹ )22.6میگاواٹ ،گاندربل 15میگاواٹ ،اپرسندھ دوم 105میگاواٹ ،پہلگام 4.5میگاواٹ اور کرناہ 2میگاواٹ شامل ہیں۔اس کے علاوہ وادی میں ایک بجلی پروجیکٹ ،جو 12میگاواٹ کی صلاحیت کاہے، کی تعمیر کا کام شروع ہوا ہے جس کی تعمیر میں دو برس لگ سکتے ہیں جبکہ مہورہ اور نیو گاندربل کی تعمیر ابھی ٹینڈرنگ عمل میں پھنسی ہوئی ہے ۔معلوم رہے کہ اس وقت جموں وکشمیر کے 12بجلی پروجیکٹ ہیں ،جن کی دیکھ ریکھ کا کام جموں وکشمیر پاور ڈیولپمنٹ کارپوریشن کے ذمہ ہے۔ کشمیر میں سندھ ،جہلم اور ان کے معاون ندی نالوں پر قائم بجلی پروجیکٹوں کی کل صلاحیت 254.1میگاواٹ ہے جبکہ چناب میں قائم چنینی ، بغلیار ، بھدرواہ اور دیگر بجلی پروجیکٹوں کی کل صلاحیت 934.3میگاواٹ ہے ۔ راوی بیسن نالہ پر سیوہ سیکنڈ بجلی پروجیکٹ کی صلاحیت 9میگاواٹ ہے اور اس طرح این ایچ پی سی کو چھوڑ کر جموں وکشمیر کے ان 12بجلی پروجیکٹوں سے کل 1137.68 میگاواٹ بجلی صلاحیت والے اکثر سردیوں کے موسم میںبجلی کی پیدوار کم دیتے ہیں ۔سرکاری سطح پر یہ دعویٰ کئے جاتے ہیں کہ مقامی بجلی پروجیکٹوں سے سرما کے موسم میں بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت صرف ڈیڑھ سو میگاواٹ رہ گئی ہے، جس میں سے بغلیار بجلی پروجیکٹ ہی 100میگاواٹ بجلی فراہم کر رہا ہے جبکہ باقی بجلی پروجیکٹ صرف 50میگاواٹ بجلی ہی فراہم کر رہے ہیں ۔