بانڈی پورہ جھڑپ:پانچوں جنگجوئوں کی شناخت ہوگئی

  کولگام+شوپیان+گاندربل+کنگن+کپوارہ//شوخ بابا صاحب سملر بانڈی پورہ میں 5روز قبل معرکہ آرائی کے دوران جاں بحق پانچوں جنگجوئوں کی شناخت ہوگئی ہے جو کئی کئی سال قبل سرحد پار چلے گئے تھے۔معلوم ہوا ہے کہ ان میں سے ایک نے وہاں شادی بھی کی تھی اور اسکے ہاں 3بچے بھی ہیں۔واضح رہے کہ ان  پانچوں جنگجوئوں کی لاشوں کو گانٹہ مولہ بارہمولہ میں غیر ملکی جنگجوئوں کیلئے مخصوص قبرستان میں دفنایا گیا ہے۔

جنگجوؤں کی شناخت

اس دوران جنگجوئوں کی ہلاکت کیخلاف بانڈی پورہ اور شوپیان میں ہڑتا ل کی گئی جبکہ قریب 4جنگجوئوں کے اہل خانہ نے بانڈی پورہ میں ضلع انتظامیہ سے رابطہ قائم کیا ہے۔حزب المجاہدین کی طرف سے جنگجوئوں کی شناخت مقامی ظاہر کرنے کے بعد سب سے پہلے دو نارو کیلر شوپیان کے ایک کنبے نے اپنے بیٹے کی لاش انکے سپرد کرنے کا مطالبہ کیا۔اہل خانہ کا کہنا ہے کہ انکا بیٹا فاروق احمد بجران عرف محمد عمر ولد میر حسین بجران ساکن دونارو پہلی پورہ کیلر شوپیان2014سے سرگرم تھا۔انہوں نے کہا کہ وہ 2014میں لاپتہ ہوا جس کے بعد اسکا کوئی اتہ پتہ نہیں چل سکا۔مذکورہ جنگجو کی خبر پھیلتے ہی شوپیان اور کیلر قصبوں میں ہڑتال ہوئی اور ہر قسم کی سرگرمیاں مفلوج ہوئیں۔مذکورہ جنگکو کے اہل خانہ بانڈی پورہ چلے گئے ہیں جہاں انہوں نے ضلع انتظامیہ سے رابطہ قائم کرلیا ہے۔گاندربل کنگن کے ایک کنبے نے بھی منگل کو دعویٰ کیا کہ انکا بیٹا پرویز احمد ٹیڈئوا عرف معاویہ ولد غلام نبی ساکن ہائن پالپورہ کنگن اس جھڑپ میں مارا گیا ہے۔اسکے بھائی محمد رفیق نے بتایا کہ پرویز 2003 سے لاپتہ تھا۔انکا کہنا تھا کہ عید الالضحیٰ تک اسکا رابطہ اہل خانہ سے تھا اور وہ سرحد پار سے فون کال بھی کرتا تھا لیکن بعد میں رابطہ منقطع ہوگیا۔اہل خانہ نے بتایا کہ وہ 15برس قبل گھر سے چلا گیا تھا اور اس نے شادی بھی کی تھی ، اور اسکے تین بچے بھی ہیں۔اہل خانہ نے بتایا کہ انہیں پولیس نے رابطہ قائم کیا جس کے بعد وہ ضلع انتظامیہ کے پاس چلے گئے ہیں۔تیسرے جنگجو کی شناخت بلال احمد ڈار و لد عبدالغنی ڈار ساکن برازلو کولگام کے بطور ہوئی ہے۔عبدالغنی ڈار دوکانداری کا کام کرتا ہے اور بلال احمداسکا بڑا بیٹا تھا۔وہ 15سال قبل 2003میں گھر سے لاپتہ ہوا ، جس کے بعد اسکے بارے میں معلوم ہوا کہ وہ سرحد پار چلا گیا ہے۔بلال احمد مقامی درسگاہ میں چبوں کی قرآن شریف کی تعلیم دیتا تھا ، جب وہ لاپتہ ہوا تھا۔بلال کے لواحقین نے بھی ضلع انتظامیہ سے رابطہ قائم کیا ہے۔چوتھے جنگجو کی شناخت محمد صادق سونتراولد محمد رجب سونتراساکن رنگ ورنو لولاب کے بطور ہوئی ہے۔پولیس کا کہنا ہے کہ محمد صادق 2010میں لاپتہ ہوا اور2011میں اسکی گمشدگی کے بارے میں پولیس نے کیس درج کیا۔مذکورہ جنگجو کے اہل خانہ نے پہلے کپوارہ پولیس اور بعد میں بانڈی پورہ پولیس سے رابطہ قائم کیا۔پانچویں جنگجو کی شناخت محمد صادق بوکٹرا ساکن ملنگام بانڈی پورہ کے بطور کی گئی تاہم اسکی لاش قابل شناخت نہیں رہی ہے۔اس دوران دونارو کیلر شوپیان کے جنگجو کی لاش اسکے لواحقین کے سپرد کرنے کیلئے قبر کشائی کے احکامات صادر کئے گئے ہیں۔یاد رہے حزب المجاہدین نے پانچ جنگجوئوں کی شناخت حیدر علی ساکن برازلو کولگام، محمد عمر ساکن شوپیان،محمد صدیق ساکن بانڈی پورہ، معاویہ ساکن کنگن اور عثمان ساکن لولاب کے بطور کی ہے۔دریں اثناء بانڈی پورہ ضلع میں سوموار کو جنگجوئوں کی ہلاکت کیخلاف چوتھے روز بھی ہڑتال رہی۔ہڑتال سے کاروباری و تجارتی سرگرمیاں متاثر رہیں جبکہ ٹریفک میں بھی خلل پڑا۔