بالاکوٹ کے سرحدی علاقوں کی رابطہ سڑکیں خستہ

مینڈھر//جہاں ایک طرف مینڈھرکے سرحدی علاقہ جات میں رہنے والے لوگوں کو حدمتارکہ پرگولہ باری کی وجہ سے پریشانیاں جھیلنی پڑتی ہیں وہیں سرحدی علاقہ جات میں بنیادی سہولیات بالخصوص سڑکوں کی حالت نہایت ناگفتہ بہ ہے جس کے نتیجے میں سرحدی مکینوں کاجینامحال ہوگیاہے۔اس سلسلے میںبالاکوٹ علاقہ سے تعلق رکھنے والے متعدد ذی شعور لوگوں نے انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ سرحد پر بسنے والے لوگوں کو انتظامیہ کی طر ف سے بنیادی سہولیات میسر نہیں کر ائی جارہی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ڈاک بنگلہ مینڈھر سے بالاکوٹ کی طرف جا رہی 12کلو میٹر سڑک ابھی تک گاڑیوں کی آمدروفت کے قابل نہیں ہے۔ان کا کہنا تھا کہ زیادہ تر سڑک میں بجری وغیرہ ڈالی ہوئی ہے لیکن دو کلو میٹر سڑک کی حالت نہایت ہی ناگفتہ بہ ہے۔انہوں نے کہاکہ جو سڑک خستہ حالی کاشکار ہے اس کو فوری طور ٹھیک کیا جائے تاکہ سڑک پر گاڑیاں چل سکیں۔اس سلسلہ میں یوتھ لیڈرظہیر خان، نمبردار بالاکوٹ حاجی ایاز خان بالاکوٹوی کا کہنا تھا کہ یہ سڑک بالاکوٹ کے سرحدی علاقہ پر رہنے والے لوگوں کیلئے بہت اہم ہے۔انہوں نے کہاکہ گولہ باری اور فائرنگ کے دوران اگر کوئی شخص زخمی ہو جاتا ہے تو یہی واحد سڑک ہے جس سے فوری طور زخمی اشخاص کو مینڈھر لایا جا سکتا ہے اور گولہ باری کے د وران باقی تمام سڑکیں خطرے سے خالی نہیں ہوتی ہیں اور اس سے قبل بھی کئی بار فائرنگ اور گولہ باری کے دوران گاڑیاں فائرنگ کی زد میں آئی ہیں لیکن ڈاک بنگلہ سے بالاکوٹ کوجانے والی سڑک لوگوں کیلئے بالکل محفوظ سڑک سمجھی جاتی ہے اور اس پرسفر بھی بہت کم ہے ۔ان کا کہنا تھا کہ انتظامیہ فوری طور اس سڑک کو مکمل کرنے میں اہم رول ادا کرے ۔اس سلسلہ میں جب متعلقہ افسران سے بات کی گئی تو ان کا کہنا تھا کہ ہماری کوشش ہے کہ سڑک کاچھوٹا سا ٹکڑا جو خراب ہے اس کی جلد ٹھیک کی جائے تاکہ سڑک گاڑیوں کی آمدروفت کے قابل ہو سکے۔ان کا کہنا تھا کہ اگر بارشوں کا موسم نہ ہو تو سڑک پر گاڑیاں چلتی ہیں لیکن ہم جلد سڑک کو گاڑیوں کی آمدروفت کے قابل بنائیں گے۔