باغوان پورہ نور باغ میں 3ماہ قبل شہری کی ہلاکت

 سرینگر//پولیس نے دعویٰ کیا ہے سرینگرشہر کے باغوان پورہ نور باغ علاقے میں 27 ستمبر کو دوران شب محاصرہ اور تلاشی کاروائیوں کے دوران ایک شہری محمد سلیم ملک ولد محمد یعقوب جنگجوئوں کی گولی سے جان بحق ہوا۔انسانی حقوق کے ریاستی کمیشن میں پولیس نے باغوان پورہ میں3ماہ قبل جان بحق نوجوان کی ہلاکت سے متعلق رپورٹ پیش کی ہے،جس میں کہا گیا کہ تھیلے تیار کرنے والا شہری جنگجوئوں کی اندھا دھند فائرنگ سے اس وقت زخمی ہوا جب وہ تاریکی کا فائدہ اٹھا کر فرار ہونے کی کوشش کر رہے تھے۔ ایس ایس پی سرینگر کی طرف سے بشری حقوق کے ریاستی کمیشن میں یہ رپورٹ انٹر نیشنل فورم فار جسٹس کے چیئرمین محمد احسن اونتو کی جانب سے کمیشن میں 28 ستمبر 2018 کو اس ہلاکت سے متعلق ایک عرضی زیر نمبر SHRC/331/Sgr/2018  پی ش کر کے واقعے کی جانچ کرنے اور اہل خانہ کو معاوضہ فرہم کرنے کے ردعمل میں پیش کی۔ رپورٹ میں کہا گیا’’ تحقیقات کے دوران یہ بات سامنے آئی کہ،جب محاصرہ کیا گیا،یہ معلوم ہوا کہ جنگجوئوں نے رات کے دوران اندھا دھند فائرنگ کی،تاکہ وہ  اس جگہ سے اندھیرے کا فائدہ اٹھا کر فرار ہو سکیں،جبکہ فائرنگ میں محمد سلیم ملک ساکن باغوان پورہ صفا کدل زخمی ہوا اور چل بسا۔ رپورٹ میں مزید کہا گیا’’تحقیقاتی افسر نے موقعہ پر گولیوں کے5 کھوکھے بھی برآمد کر کے ضبط کئے،جبکہ اس معاملے کی تحقیقات جاری ہے۔‘‘  اس سے قبل درخواست گزار نے عرضی میں سوالیہ انداز میں کہا کہ سخت محاصرے کے دوران کس طرح جنگجو نو رباغ قمرواری میں فرار ہونے میں کامیاب ہوئے اور ایک معصوم شہری جان بحق ہوا۔