بارہمولہ تصادم : لشکر طیبہ کمانڈر سمیت 2 جنگجو جاں بحق، 3 فوجی اور ایک شہری زخمی:آئی جی پی کشمیر

نیوز ڈیسک

 

بارہمولہ// شمالی کشمیر کے ضلع بارہ مولہ کے مالوا علاقے میں سیکورٹی فورسز اور جنگجووں کے مابین تصادم آرائی میں لشکر طیبہ سے وابستہ 2 جنگجو ماے گئے ہیں  جبکہ آپریشن ہنوز جاری ہے۔

 

اسی دوران لشکر طیبہ کے طویل عرصے تک زندہ رہنے والے کمانڈر سمیت تین جنگجو مارے گئے ہیں۔ 

 

آئی جی پی کشمیر نے بتایا کہ مارے گئے جنگجو کی شناخت لشکر طیبہ کے سرکردہ کمانڈر یوسف کانترکے طور ہوئی ہے۔ یوسف عام شہریوں اور ایس ایف کے اہلکاروں پر کئی حملوں میں ملوث تھا جس میں جموں و کشمیر پولیس کے ایس پی او اور اس کے بھائی، ایک فوجی اور ایک شہری کا ضلع بڈگام میں حالیہ قتل شامل ہے۔ 

 

اس تصادم میں ابتدائی گولیوں کے تبادلے میں 3 فوجی اور ایک عام شہری زخمی ہوئے جنہیں علاج ومعالجہ کی خاطر نزدیکی ہسپتال منتقل کیا گیا ہے۔

 

ایک پولیس ترجمان نے کہا کہ بارہمولہ انکاونٹر میں لشکر طیبہ کے تین جنگجو مارے گئے جبکہ آپریشن ابھی جاری ہی ہے۔انہوں نے کہا کہ مہلوک جنگجو کی تحویل سے اسلحہ و گولہ بارود کے علاوہ قابل اعتراض مواد بھی بر آمد کیا گیا۔

 

قبل ازیں پولیس ذرائع نے بتایا کہ شمالی ضلع بارہ مولہ کے مالوا علاقے میں ملی ٹینٹوں کے چھپے ہونے کی ایک خاص اطلاع موصول ہونے کے بعد پولیس اور سیکورٹی فورسز نے جمعرات علی الصبح اس علاقے کو محاصرے میں لے کر جنگجو مخالف آپریشن شروع کیا۔

 

انہوں نے بتایا کہ خود کو سلامتی عملے کے گھیرے میں پا کر ملی ٹینٹوں نے سیکورٹی فورسز پر اندھا دھند گولیاں برسا کر فرار ہونے کی بھر پور سعی کی تاہم حفاظتی عملے کی کارگر حکمت عملی نے ا±نہیں فرار ہونے کا کوئی موقع فراہم نہیں کیا اور اس طرح سے طرفین کے مابین جھڑپ شروع ہوئی۔

 

مذکورہ ذرائع کے مطابق سیکورٹی فورسز نے آس پاس علاقوں کو پوری طرح سے سیل کرکے فرار ہونے کے سبھی راستوں پر پہرے بٹھا دئے ہیں۔