ایک دہائی میں مئی کا گرم ترین دن ریکارڈ آنے والے ایام گرم ترین رہیں گے،سرینگر میں پارہ32.2اور جموں میں40.1جاپہنچا

 عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر //جموں و کشمیر میں بڑھتا ہوا درجہ حرارت پچھلے ریکارڈوں کو پیچھے چھوڑ رہا ہے کیونکہ مئی کے مہینے میں سری نگر میں موسم کا گرم ترین دن اور کم از کم ایک دہائی میں سب سے زیادہ درجہ حرارت ریکارڈ کیا گیا۔محکمہ موسمیات نے بتایا کہ سرینگر میں بدھ کو 31.6 ڈگری کے مقابلے میں جمعرات کو زیادہ سے زیادہ 32.2 ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا اور یہ درجہ حرارت اس موسم کا سب سے زیادہ تھا،اور یہ گزشتہ دہائی میں مئی میں ریکارڈ کیا گیا گرم ترین دن تھا۔ 2014 کے بعد سے پچھلا سب سے زیادہ درجہ حرارت 22 مئی 2016 کو 31.9 ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا تھا۔ 2014 سے پہلے کے اعداد و شمار فوری طور پر دستیاب نہیں تھے۔ انہوں نے کہا کہ 24 مئی 1968 کو اب تک کا زیادہ سے زیادہ درجہ حرارت 36.4 ڈگری سینٹی گریڈ تھا۔قاضی گنڈ میں بالترتیب 32.6 ، پہلگام میں 27.3 ، کوکرناگ میں 30. 1 ، کپواڑہ میں 30.6 اور گلمرگ میں 22.0 ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیاگیا۔ محکمہ موسمیات نے بتایا کہ جموں میں 40.1 ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا۔محکمہ نے کہا کہ جموں و کشمیر کے میدانی علاقوں میں “گرمی کی لہر” اگلے 6 دنوں تک جاری رہنے کا امکان ہے۔انہوں نے کہا کہ 23 سے 28 مئی تک موسم عام طور پر خشک رہنے کی توقع ہے یہاں تک کہ ” الگ تھلگ” مقامات پر گرج چمک کے ساتھ بارش کے امکان کو رد نہیں کیا جا سکتا۔29-31 مئی تک، موسم جزوی سے عام طور پر ابر آلود رہنے کا امکان ہے اور الگ تھلگ مقامات پر ہلکی بارش ہوسکتی ہے۔”مجموعی طور پر، 31 مئی تک کوئی اہم موسمی سرگرمی متوقع نہیں ہے،” ۔انہوں نے کہا کہ پہاڑی اضلاع میں بھی اگلے چھ دنوں کے دوران موسم گرم اور خشک رہنے کا امکان ہے۔دریں اثنا، رات کے درجہ حرارت میں بھی اضافہ کا رجحان جاری رہا ۔سرینگر میں گزشتہ رات 15.0 ریکارڈ کیا گیا۔ قاضی گنڈ میں 11.8 ،پہلگام میں 7.7 ، کوکرناگ میں 11.4 ، کپوارہ میں 11.5 اورگلمرگ میں 11.0 ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا۔انہوں نے کہا کہ جموں میں گزشتہ رات 29.1 بانہال میں 15.2 ، بٹوٹ میں 18.4 اور بھدرواہ میں 15.8 ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا۔