ایشیا کپ میں شائقین کی نظریں خاص طورپر کوہلی ، بابر اور راشد خان پر

نئی دہلی //ایشیا کپ 2022 ہفتہ سے متحدہ عرب امارات میں شروع ہونے جا رہا ہے۔ اس ٹورنامنٹ میں ہندوستان کے سپر اسٹاروراٹ کوہلی، پاکستان کے کپتان بابر اعظم جیسے تمام کھلاڑی ایکشن میں نظر آئیں گے۔ اس مقابلے میں ایشیا کا چیمپئن بننے کے لئے ا?پس میں مقابلہ کریں گے ، جسے اکتوبر میں آسٹریلیا میں ہونے والے ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے وارم اپ ٹورنامنٹ کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ پاکستان کے اعلیٰ گیندبازشاہین آفریدی کے انجری کے باعث ٹورنامنٹ سے باہر ہونے کے بعد بابر اعظم پر کافی ذمہ داری ہوگی اور شائقین کو کپتان سے جارحانہ بلے بازی کی توقع رہے گی۔ 27 سالہ بلے باز نے ہالینڈ کے خلاف اپنی آخری سیریز میں دو بڑی نصف سنچریاں اسکور کی ہیں۔

 

اس وقت وہ ٹی ٹوئنٹی اور ون ڈے رینکنگ میں دنیا کے نمبر ایک بلے باز ہیں۔ آخری بار جب پاکستان نے 2021 کے ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ میں ہندوستان کو 10 یکطرفہ سے شکست دی تھی، بابر نے اس میچ میں ناٹ ا?وٹ 68 رنز بنائے تھے۔ یہ میچ اسی گراؤنڈ پر کھیلا گیا جہاں یہ دونوں ٹیمیں اتوار کو ایک بار ٹکرانے والی ہیں۔ اسٹار بلے باز وراٹ کوہلی اس میچ کے دوران اپنا 100 واں ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میچ کھیلیں گے۔ انہیں ہندوستان کے حالیہ دورہ ویسٹ انڈیز اور زمبابوے کے دوران آرام دیا گیا تھا۔ 33 سالہ کرکٹر کو بڑی اننگز کی اشد ضرورت ہے۔ انہوں نے اپنی آخری سنچری نومبر 2019 میں بنائی تھی اور اس کے بعد سے وہ اپنے کیریئر کے بدترین دور سے گزر رہے ہیں۔ سری لنکا کے آل راؤنڈر ہسرنگا نے اس سال کے آئی پی ایل 2022 میں آر سی بی کے لیے شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا تھا۔ وہ سیزن میں کھیلے گئے 16 میچوں میں 26 وکٹیں لے کر ٹاپ گیند بازوں میں سے ایک تھے۔ مہیش، جیفری وانڈرسے اور پروین جے وکرما جیسے ساتھی اسپنرز کے ساتھ ہسرنگا متحدہ عرب امارات میں گیندبازی کی قیادت کریں گے۔ 25 سالہ کھلاڑی نے انگلینڈ میں کھیلے گئے دی ہنڈریڈ ٹورنامنٹ میں حصہ نہیں لیا کیونکہ سری لنکا کی ٹیم ایشیا کپ اور ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے لیے انہیں تازہ دم دیکھنا چاہتی تھی، جو لوئر مڈل آرڈر میں کچھ رنز بھی جمع کر سکیں۔ بنگلہ دیش کے کپتان شکیب الحسن اکثر میدان کے اندر اور باہر تنازعات میں پھنسے رہتے ہیں۔