اہم خبریں

دونوں قبائل کو انصاف دینے کا بیان
لوگوں نے وزیر داخلہ کا شکریہ ادا کیا
حسین محتشم
پونچھ//راجوری میں مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ کی جانب سے پہاڑی اور گوجر طبقہ کو انصاف فراہم کرنے کے بیان کی سماج میں ستائش کی جارہی ہے ۔بھاجپا ضلع صدر پونچھ انجینئر محمد رفیق چشتی نے وزیر داخلہ امت شاہ کے گوجر بکرواک اور پہاڑیوں کو ایک نظر سے دیکھنے اور دونوں طبقہ جات کو شیڈول ٹرائب کا برابر درجہ دئے جانے کے اعلان کا استقبال کیا ہے۔انکا کہنا تھا کہ پچھلے پچاس سالوں سے جو سابقہ حکومتیں نہیں کرپائیں وہ موجودہ حکومت کے دور میں ممکن ہوا ہے۔ انہوں نے کہا وزیر داخلہ نے یہ بھی کہا ہے کہ پہاڑیوں کو انکا حق ضرور دیا جائیگا لیکن گجر بکروال کی ریزرویشن کے ساتھ کوئی بھی چھیڑ چھاڑ نہیں کی جائیگی جس کی تمام عوام سراہنا کر رہے ہیں۔ وزیر داخلہ امت شاہ کے راجوری دورہ کی ستائیش کرتے ہوئے چیئر مین پیرپنچال ہیومن رایٹ پونچھ فورم ایڈوکیٹ محمد زمان نے ایس ٹی درجہ تمام طبقہ کو دینے کا وعدہ کیا ہے اسکی ستائش کی ہے۔اس کے علاوہ سماجی سطح پر بھاجپا کی مرکزی حکومت کی ستائش جاری ہے جبکہ لوگ مرکزی قیادت کا شکریہ ادا بھی کررہے ہیں ۔

 

بیر پنچایت میں طبی کیمپ لگایا گیا
بختیار کاظمی
سرنکوٹ// بلاک میڈیکل آفیسر سرنکوٹ کی ہدایت پرسرنکوٹ کی ایک انتہائی دور افتادہ پنچایت بیر میں میڈیکل کیمپ کا انعقاد کیا گیا جس میں ضرورت مندوں کو بنیادی طبی سہولیات فراہم کی گئی ۔اس کیمپ کے دوران تمام عملے بشمول ڈاکٹروں کی ایک بہترین ٹیم اور پیرامیڈیکل کے ملازمین نے مکینوں کو طبی سہولیات فراہم کیں ۔مکینوں نے کہاکہ شعبہ صحت کے ملازمین نے ایک دور افتادہ علاقہ میں مقامی لوگوں کو بہترین طبی سہولیات فراہم کرنے کیلئے ان کیساتھ تعاون کر کے محنت اور لگن کیساتھ کام کیا ۔اس کیمپ کے دوران علاقہ مکینوں کو مفت طبی معائینہ کرنے کیساتھ ساتھ ان کو ادویات بھی فراہم کیں ۔مقامی لوگوں نے محکمہ صحت کا شکریہ ادا کیا ۔

راج نگر لوہر میں پانی کی قلت سے لوگ متاثر
سید زاہد
بدھل //بدھل علاقہ کی پنچایت راج نگر لوہر میں پینے کے صاف پانی کی قلت کی وجہ سے عام زندگی مفلوج ہو کر رہ گئی ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ پنچایت کی وارڈ نمبر 7اور 8میں جے سی بھی مشین کی وجہ سے پاپئیں متاثر ہوئی ہیں جس کی وجہ سے گزشتہ ایک ہفتے سے پینے کے صاف پانی کی شدید قلت پیدا ہو گئی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ دنوں وارڈوں میں لگ بھگ دو سو سے زائد کنبوں کو پانی کی قلت کا سامنا کرناپڑرہا ہے لیکن متعلقہ شعبہ سے رجوع کرنے کے بعد بھی کوئی عملی قدم نہیں اٹھایاگیا ہے ۔انہوں نے انتباہ دیتے ہوئے کہاکہ اگر جلداز جلد سپلائی کا عمل بحال نہیں کیاگیا تو متعلقہ محکمہ کیخلاف احتجاج کیاجائے گا ۔

بدھل میں منعقدہ ٹورنامنٹ اختتام پذیر
بدھل //فوج نے خطہ پیر پنچال میں اپنی سرگرمیاں جاری رکھتے ہوئے بدھل میں دنگل اور کبڈی کا اہتمام کیاہوا تھا جو کہ گزشتہ رو ز اختتام پذیر ہو گیا ۔ان کھیل مقابلوں میں کوٹرنکہ اور بدھل کے دور دراز علاقوں کے نوجوانوں نے بڑی تعداد میں شرکت کر کے اپنی صلاحیتوں کا مظاہر ہ کیا ۔سموٹ میں قائم انڈین آرمی کی یونٹ کی جانب سے مذکورہ کھیل مقابلوں کا انعقاد یکم اکتوبر سے 5اکتوبر تک کیا ہوا تھا ۔ٹورنامنٹ کے دوران کبڈی مقابلوں میں راجوری ،ریاسی ،بدھل ،کوٹرنکہ ودیگر علاقوں کی کل 11ٹیموں نے شرکت کی جبکہ مذکورہ مقابلے ناک آئوٹ کی بنیاد پر منعقد کئے گئے تھے ۔اس کے علاوہ دنگل مقابلوں میں مختلف زمروں کے تحت کل 54پہلوانوں نے شرکت کی ۔مقابلوں کے اختتام پر بہترین کھیل کا مظاہرہ کرنے والی ٹیموں و کھلاڑیوں کو انعامات سے بھی نوزا گیا ۔مقامی معززین نے فوج کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہاکہ کھیلوں کو فروغ دینے و مقامی کھلاڑیوں کو اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کرنے کا موقع فراہم کرنے کیلئے فوج ایک اہم رول ادا کررہی ہے ۔

وزیر داخلہ کی یقین دہانی کے بعد پہاڑی قبیلہ خوش
دہائیوں کی طویل جدو جہد رنگ لائی :پہاڑی لیڈران
سمت بھارگو
راجوری//راجوری اور پونچھ میں پہاڑی لوگ منگل کی ریلی کے دوران وزیر داخلہ کی طرف سے درج فہرست قبائل کا درجہ دینے کے وعدے پر خوش ہیں اور اسے اپنی دہائیوں کی طویل جدوجہد کی کامیابی کی بڑی علامت قرار دے رہے ہیں۔لوگوں نے بدھ کو راجوری اور پونچھ بھر میں میٹنگیں بھی کیں تاکہ پہاڑیوں کے تئیں وزیر داخلہ کا اظہار تشکر کیا جا سکے۔پہاڑی قائدین بشمول شہباز خان، جہانگیر خان، وکرانت شرما اور دیگر نے کہا کہ وزیر داخلہ کی منگل کی ریلی خاص طور پر پہاڑی لوگوں کیلئے ایک شاندار کامیابی ہے جو اپنے شیڈولڈ ٹرائب کا درجہ دینے کے مطالبے کے لئے طویل عرصے سے جدوجہد کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ یہ پہلی بار ہوا ہے کہ کوئی مرکزی وزیر داخلہ پہاڑی لوگوں اور قوم کے لئے ان کی خدمات کا ذکر کرنے کیلئے پیر پنجال کے علاقے میں پہنچا۔انہوں نے کہاکہ اس عمل کیلئے وہ مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ کے ہمیشہ مشکور رہیں گے ۔پہاڑی لیڈران نے کہاکہ ’’ہم پہاڑیوں کیلئے شیڈول ٹرائب کا درجہ حاصل کرنے کے لئے طویل عرصے سے جدوجہد کر رہے ہیں اور اس جدوجہد میں کئی اتار چڑھاؤ دیکھے ہیں۔انہوں نے کہا کہ منگل کی ریلی اس دوڑ میں سب سے اہم پیش رفت میں سے ایک ہے۔پہاڑی رہنماؤں نے کہا کہ درج فہرست قبائل کا درجہ مانگنا پہاڑی لوگوں کی دہائیوں کی طویل جدوجہد ہے جس کیلئے انہوں نے اب تک بھرپور جدوجہد کی ہے اور جموں و کشمیر کی تقریباً تمام حکومتوں نے اس درجہ کا وعدہ کیا تھا لیکن کسی نے بھی کوئی ٹھوس قدم نہیں اٹھایا جبکہ مرکز کی حکومتوں نے بھی اس حیثیت کا وعدہ کیا لیکن کچھ نہیں کیا۔راجوری اور پونچھ اضلاع میں پہاڑی برادری کے لوگوں نے متعدد تقریبات اور میٹنگیں منعقد کیں اور انہوں نے مرکزی وزیر داخلہ کا شکریہ ادا بھی کیا ۔

 

پونچھ میں پاسپورٹ دفتر قائم کرنے کی مانگ
عشرت حسین بٹ
منڈی//سرحدی ضلع پونچھ کی عوام نے سرکار سے اپیل کی ہے کہ پونچھ میں پاسپورٹ دفتر کھولا جائے تاکہ ضلع پونچھ کی عوام کو پاسپورٹ بنانے کے لئے جموں یا راجوری کا رخ نہ کرنا پڑے ۔واضح رہے کہ ضلع پونچھ کی عوام کو بیرون ممالک جانے کے لئے پاسپورٹ کیلئے جموں یا پھر راجوری کا رخ کرنا پڑتا ہے ۔مقامی معززین نے کہاکہ ضلع ہیڈ کوارٹر پر پاسپورٹ دفتر نہ ہونے کی وجہ سے غریب طبقہ کو شدید مشکلات کا سامنا کرناپڑرہا ہے ۔انہوں نے انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ ضلع ہیڈ کوارٹرپونچھ میں بھی مذکورہ شعبہ کی ایک شاخ قائم کی جائے تاکہ عوام کی مشکلات کا ازالہ ہو سکے۔ منڈی تحصیل سے تعلق رکھنے والے محمد بشارت نامی ایک شخص نے کشمیر عظمی کو بتایا کہ پونچھ میں پاسپورٹ کا دفتر نہ ہونا یہاں کی عوام کے لئے کافی مشکلات کا سبب بنا ہوا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ انہیں اپنا اور اپنے خاندان کے لوگوں کا پاسپورٹ بنوانے کے لئے جموں جانا پڑا۔ انہوں نے کہا کہ یہاں کے لوگ غریب ہیں جن کے پاس اتنا سرمایہ نہیں ہے کہ وہ جموں یا راجوری جا کر پاسپورٹ بنوا سکیں۔ مقامی لوگوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ پونچھ ضلع ہیڈ کوارٹر پر پاسپورٹ دفتر کی شاخ کھولی جائے تاکہ لوگوں کی پریشانی ختم ہو سکے ۔

 

ساوجیاں میں پاگل کتے کا قہر
۔18افراد کو اپنا نشانہ بنایا
عشرت حسین بٹ
منڈی//تحصیل منڈی کے سرحدی علاقہ ساوجیاں میں بدھ کو ایک پاگل کتیْ نے 18افراد کو اپنا شکار بنایا۔مقامی ذرائع کے مطابق بدھ کو ضلع پونچھ کی تحصیل منڈی کے سرحدی علاقہ ساوجیاں میں ایک پاگل کتْا نمودار ہوا جس نے علاقہ گگڑیاں اور ساوجیاں سے تعلق رکھنے والے 18لوگوں کو اپنا نشانہ بنایا جن کی شناخت مشتاق احمد،عاشق پرویز، شریفہ بی، سلیمہ بی،تبسم آراء ، انشاء بانو، جان بیگم، منظور، احمد، عبدل احد، باغ حسین، فاروق احمد،شاہجہان احمد،غلام محمد، تصویر حسین،مبارک گل، شاہ محمد، شمیم بیگم،روبینہ اختر ساکنان گگڑیاں ساوجیاں کے طور پر ہوئی ہے۔ بعد ازاں پولیس اور مقامی لوگوں کی مدد سے تمام زخمیوں کو ساوجیاں ہسپتال لایا گیا جہاں پر ان کا علاج معالجہ کیا گیا ۔ذرائع کے مطابق مذکورہ پاگل کتے کو ہلاک کردیا گیا ہے ۔ساوجیاں ہسپتال کے میڈیکل آفیسر ڈاکٹر علی محمد نے کشمیر عظمی کو بتایا کہ بدھ کو ان کے پاس پاگل کتْے کا شکار ہوئے 18 زخمیوں کو لایا گیا جن کا علاج و معالجہ ساوجیاں ہسپتال میں کیا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے تمام زخمیوں کو ضروری ویکسین لگائی ۔