اپنے حقوق کیلئے لڑنا ہمارا کام

اپنے حقوق کیلئے لڑنا ہمارا کام 

ہندوپاک میںمذاکرات اور بہتر تعلقات ضروری:ڈاکٹر فاروق 

جاوید اقبال 
مینڈھر //ہندوستان اور پاکستان کے درمیان تمام معاملات پر بات چیت اور بہتر تعلقات خطہ میں امن و امان اور تعمیر و ترقی کی ۔ان خیالات کا اظہار نیشنل کانفرنس صدر اور سابقہ ریاستی وزیر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے خطہ پیر پنچال کے دورے کے دوران کیا ۔انہوں نے کہاکہ دونوں پڑوسی ممالک کو چاہئے کہ وہ امن کو بحال رکھنے کیلئے آپسی اشتراک سے کام کریں ۔خطہ پیر پنچال کے دورے کے دوران مینڈھر میں پارٹی کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے این سی صدر نے کہاکہ  ہندوستان اور پاکستان کے درمیان دوستی اور اچھے تعلقات کے سوا کوئی راستہ نہیں’’ ہم لوگ بھی اسی صورت میں عزت اور امن و سکون کیساتھ زندگی بسر کرسکتے ہیں۔ دفعہ370اور35اے کی بحالی کیلئے جدوجہد جاری رکھنے کے عزم کو دہراتے ہوئے ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ اپنے حقوق کیلئے لڑنا ہمارا کام ہے اور اگر ہمارا ایمان پختہ ہوگا اور اللہ تعالیٰ کی عنایت ہم پر ہوگی تو کامیاب ضروری ہمارے قدم چومے گی لیکن اس کے لئے ہمیں ثابت قدم رہنا ہوگاکیونکہ اس جدوجہد میں ہمیں بہت سارے مشکلات اور چیلنجوں سے گزرنا پڑے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہم کوئی بھیک نہیں مانگ رہے ہیں بلکہ ہم اپنے حق کیلئے لڑ رہے ہیں۔ ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا ہے کہ جواہر لعل نہرو سے لیکر منموہن سنگھ اور لال بہادر شاستری سے لیکر واجپائی تک سارے وزرائے اعظم نے امن مذاکرات کئے یہاں تک موجودہ وزیر اعظم نریندر مودی بھی لاہور جاکر اُس وقت کے وزیر اعظم نواز شریف کے گھر گئے۔انہوں نے کہاکہ سابقہ وزیر اعظم اٹل بہاری وجپائی نے کہا تھا کہ ’دوست بدلے جاسکتے ہیں لیکن پڑوسی نہیں ‘‘۔انہوں نے جموں وکشمیر کی ریاست کا درجہ بحال کرنے کے سلسلہ میں دئیے جارہے بیانات پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ مرکزی حکومت نئی حد بندی کے بعد ریاست کا درجہ بحال کرنے کی باتیں کررہی ہے تاہم یہ افسوس ناک عمل ہے کہ عوام کو ان کا حق نہیں دیا جارہا ہے ۔این سی لیڈر نے کہاکہ وزیر اعظم نریندر مودی کی جانب سے بلائی گئی آل پارٹی میٹنگ کے دوران دہلی اور دلی دوریوں کی مٹانے کی بات کی گئی تھی لیکن مذکورہ طرز کی پالیسیوں سے دوریاں ختم نہیں ہوسکتی ۔انہوں نے کہاکہ کسی سیاسی طاقتوں کی جانب سے سماج کو تقسیم کر کے اپنا سیاسی مفاد حاصل کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں لیکن مذکورہ قدم ملکی یکجہتی کیلئے انتہائی خطرے ناک ہے ۔انہوں نے کہاکہ اس قسم کی فضا میں آپسی بھائی چارے کو قائم رکھنا اشد ضروری ہے ۔مینڈھر میں منعقدہ پروگرام کے دوران پارٹی کے جنرل سیکریٹری علی محمد ساگر ،ڈاکٹر مصطفیٰ کمال سابقہ ممبر اسمبلی مینڈھر جاوید احمد رانا ودیگر پارٹی کارکنوں بھی موجود تھے ۔
 
 
 

فاروق عبداللہ نے زیارت شاہدرہ شریف پر حاضری دی

عظمیٰ یاسمین
 تھنہ منڈی // نیشنل کانفرنس صدر اور جموں کشمیر کے سابقہ وزیر اعلی ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے اتوار کو شاہدرہ شریف میں بابا غلام شاہ بادشاہ رحمتہ اللہ علیہ کے مزار پر حاضری دی اور امن و خوشحالی کیلئے دعا کی۔ان کے ہمراہ سابقہ جج اور این سی کے سینئر لیڈر مظفر خان بھی موجود تھے۔ اس موقع پر مزار کے امام اور خطیب نے نیشنل کانفرنس کے سربراہ کی دستار بندی کی۔واضح رہے کہ ڈاکٹر فاروق عبداللہ اس وقت راجوری اور پونچھ کے دورے پر ہیں تاکہ وہ اپنی پارٹی کے کارکنوں اور رہنماؤں سے مل سکیں۔ اس سے قبل تھنہ منڈی میں سینئر لیڈر مشتاق احمد شال, ایڈوکیٹ ارشد سمیال اور شمیم مغل کے ہمراہ سینکڑوں پارٹی کارکنان نے ان کا والہانہ استقبال کیا۔ وہیں پارٹی لیڈر مشتاق احمد شال کی سربراہی میں ایک وفد بھی ان سے ملاقی ہوا جن میں شمیم مغل اور بشیر احمد وانی کے علاوہ کئی سیاسی لیڈر شامل تھے۔پارٹی کارکنان ڈاکٹر فاروق عبداللہ کو یقین دلایا کہ وہ پارٹی کو مزید مضبوط اور مستحکم کرنے کی ہر ممکن کوشش کریں گے اس کے بعد ڈاکٹر عبداللہ پونچھ کے لئے روانہ ہوگئے۔
 
 
 
 

او بی سی وفد این سی صدر سے ملاقی 

جاوید اقبال 
مینڈھر //نیشنل کانفرنس صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ کے مینڈھر دورے کے دوران او بی سی طبقہ کے ایک وفد نے ان سے ملا قات کر کے پسماندہ طبقہ کو درپیش مشکلات کے سلسلہ میں جانکاری فراہم کی ۔سبکدوش گردوار محمد بشیر کی قیادت میں وفد نے اپنی شکایت درج کرواتے ہوئے کہاکہ مرکزی حکومت کی جانب سے طبقہ کی فلاح و بہبود کیلئے  27فیصد ریزرویشن دی گئی تھی لیکن جموں وکشمیر میں صرف2فیصد ریزرویشن دی جارہی ہے جو کہ سماج کے پسماندہ طبقہ کیساتھ ایک بڑی نا انصافی ہے ۔انہوں نے کہاکہ گزشتہ کئی عرصہ سے مذکورہ مطالبے کو لے کر وہ اعلیٰ حکام اور سیاسی لیڈران کیساتھ ملا قاتیں کررہے ہیں لیکن ابھی تک ان کو انصاف نہیں دیا گیا ہے ۔نیشنل کانفرنس صدر نے وفد کے اراکین کو یقین دلاتے ہوئے کہاکہ اس سلسلہ میں مرکزی کو ان کی یاداشت پیش کی جائے گی تاکہ سماج کے پسماندہ طبقہ کی فلاح و بہبودکیلئے قدم اٹھایا جاسکے ۔
 
 
 
 

نوشہرہ سڑک حادثے میں 3زخمی 

سمت بھارگو +رمیش کیسر 
نوشہرہ //سب ڈویژن نوشہرہ میں ہوئے سڑک حادثوں میں 3افراد زخمی ہوگئے ۔نوشہرہ سب ڈویژن کے بھوانی گائوں میں ہوئے دو گاڑیوں کے درمیان ہوئے تصادم کی وجہ سے تین افراد زخمی ہوئے ہیں ۔جموں وکشمیر پولیس نے بتایا کہ اتوار کو مذکورہ علاقہ میں ایک موٹر سائیکلزیر نمبرJK11F-0344اور ایک ٹاٹا موبائل گاڑی زیر نمبر JK02BM-3552کے مابین ہوئے تصادم کی وجہ سے مذکورہ افراد زخمی ہوئے ہیں ۔پولیس نے بتایا کہ موٹر سائیکل پر تین افراد سوار تھے جوکہ حادثے میں زخمی ہوئے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ زخمیوں کو بچائو کارروائی کے بعد سب ڈسٹر کٹ ہسپتال بوشہرہ منتقل کیا گیا ہے ۔پولیس نے اس سلسلہ میں ایک معاملہ درج کرکے مزید تحقیقات شروع کر دی ہیں ۔اسی طرح مناور دریا میں ایک ٹریکٹر حادثے کا شکار ہو گیا تاہم اس میں کسی جانی نقصان کی کوئی خبر نہیں ہے ۔
 
 
 
 
 

دراج میں جنگلی جانوروں کا خوف 

محمد بشارت
کوٹرنکہ //سب ڈویژن کوٹرنکہ کے دراج علاقہ میں جنگلی جانوروں کی دیہات میں آمد سے خوف وہراس پیدا ہوگیا ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ گزشتہ کچھ دنوں سے جنگلی جانور دیہات کی جانب آگئے ہیں جس کے بعد عام لوگوں کیساتھ ساتھ مویشیوں کیلئے بھی خطرہ پیدا ہو گیا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ علاقہ کے رہائشی عطا محمد ولد محمد شفیع پر گزشتہ روز ریچھ نے حملہ کر کے اس کو شدید زخمی کر دیا تاہم مقامی لوگوں کے موقعہ پر پہنچ جانے کی وجہ سے اس کو بچا لیا گیا ۔انہوں نے بتایا کہ زخمی کو علاج معالجہ کیلئے کمیونٹی ہیلتھ سنٹر کوٹرنکہ منتقل کیا گیا ہے ۔مقامی لوگوں نے ضلع ترقیاتی کمشنر راجوری سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ محکمہ وائلڈ لائف کو ہدایت جاری کی جائیں تاکہ جنگلی جانوروں کو جنگلوں کی جانب واپس کرنے کیلئے عملی اقدامات اٹھائے جائیں ۔
 

پہاڑیوں کو ایس ٹی کا درجہ دینے کا مطالبہ 

تھنہ منڈی // پہاڑی طبقہ سے وابستہ معززین نے جموں وکشمیر کیساتھ ساتھ بھاجپا کی مرکزی حکومت سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ طبقہ کی فلاح و بہبود کیلئے ان کو جلدازجلد ایس ٹی کا درجہ دیا جائے ۔انہوں نے کہاکہ گزشتہ کئی دہائیوں سے پہاڑی طبقہ کیساتھ نا انصافیاں کی جارہی ہیں جس کی وجہ سے طبقہ کے نوجوانوں کو شدید مشکلات درپیش ہیں ۔پہاڑی یوتھ لیڈرمرتضیٰ مرزا نے وزیر داخلہ امت شاہ سے جموں کشمیر میں رہنے والے لاکھوں پہاڑیوں کو ایس ٹی سٹیٹس کا درجہ دینے کی پرزور مانگ کرتے ہوئے کہا ہے کہ پہاڑی طبقہ کو پچھلی سات دہائیوں سے مختلف سیاسی پارٹیوں نے صرف ووٹ بنک کی سیاست کے طور پر استعمال کیا ہے۔ درجنوں جھوٹے وعدے کیے لیکن کوئی بھی وعدہ شرمندہ تعبیر نہ ہو سکا. مرتضیٰ مرزا نے کہا کہ ہمارے پہاڑی لوگ راجوری، پونچھ، اوڑی، کرناہ، کیرن، کپواڑہ تک کے دور دراز پہاڑی علاقوں میں کسمپرسی کی زندگی بسر کرنے پر مجبور ہیں لیکن ان کا کوئی پرسان حال نہیں ہے۔ مرتضیٰ مرزا نے مزید کہا ہے کہ اس پسماندہ طبقے نے بی جے پی حکومت سے بہت ساری امیدیں وابستہ کر رکھی ہیں چونکہ یہ حکومت سب کا ساتھ، سب وکاس اور سب کا وشواس کے نعرے پر کاربند ہے۔پہاڑ ی طبقہ کے معززین نے امید ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی حکومت اس پسماندہ طبقہ کی دیرینہ مانگ کو پورا کر کے ان کی سہولیات فراہم کرئے گی ۔
 
 
 

گوجر بکروال طبقہ کا وفد وزیر داخلہ سے ملا قی 

حسین محتشم
پونچھ//پونچھ سے گوجر بکروال طبقہ کا ایک وفد ضلع ترقیاتی کونسل ممبر ریاض بشیر ناز کی قیادت میں ملاقی ہوا ۔وزیر داخلہ سے ملاقات کے دوران انہوں نے جموں و کشمیر کی مشترکہ عوام کو درپیش کئی مسائل پر تبادلہ خیال کیا۔ یاداشت کے ذریعے ان کی طرف سے نمایاں کیے گئے اہم معاملات میں’فارسٹ رائٹ ایکٹ کا منصفانہ نفاذ ،ریزرویشن کا نفاذ، پروموشن میں ریزرویشن، ایجوکیشن سیکٹر، گوجری زبان کو آٹھویں شیڈول میں شامل کرنا، خود انحصار کلسٹر ولیج، سیاسی ریزرویشن، قبائلیوں کیلئے خصوصی بھرتی، جعلی ایس ٹی سرٹیفکیٹ کا اجرا، جموں و کشمیر یونیورسٹی میں گوجری ڈپارٹمنٹ کا آغاز، 1 کی ترقی کشمیر اور جموں یونیورسٹی ایس ٹی گوجر بکروال گڈی سپی کیلئے UG/PG/PHD سطح کے کورسز میں داخلے کیلئے دس فیصدکوٹہ، سرحدی ضلع پونچھ میں IGNOU یونیورسٹی کے کیمپس کا افتتاح، بھارتی فوج میں گوجر ریجمنٹ کا قیام، SC ST کے حقوق پر تیزی سے عمل درآمد۔ جموں و کشمیر میں ایکٹ، سرحدی ضلع پونچھ میں گورنمنٹ میڈیکل کالج کا قیام، پونچھ میں قبائلی ثقافتی مرکز کا افتتاح، پونچھ حویلی کے علاقوں میں ایکلویہ ماڈل رہائشی اسکول EMRS کھولنا، گوجر ہاسٹل پونچھ کی اپ گریڈیشن اور قبائلیوں کے لیے نئے رہائشی اسکول کا آغاز۔ سرحدی علاقے۔ میمورنڈم کے اہم مسائل تھے۔ اس کے علاوہ مسٹر ناز نے وزیر داخلہ سے ملاقات کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ وزیر داخلہ نے تمام مسائل کو پورے تحمل اور دل سے سنا اور ہر ممکن حل کرنے کی یقین دہانی کرائی۔
 
 
 
 

پبلک ویلفیئر فرنٹ نے پونچھ میں شجرکاری مہم چلائی 

حسین محتشم
پونچھ// پبلک ویلفیئر فرنٹ کے چیئرمین زوراور سنگھ شہباز کی قیادت میں پونچھ میں شجر کاری مہم چلائی گئی اس دوران فرنٹ کے اراکین نتن شرما ، اجیت سنگھ ، کشور کمار نے پونچھ کے مختلف علاقوں میں پودے لگا کر لوگوں کو شجر کاری کا پیغام دیا۔ جھلاس کے شمشان گھاٹ ، درہ دولیاں کے قبرستان میں پودے لگائے۔ ادھر جموں میں فرنٹ کی خواتین ونگ نے بھی پوجا مشرا کی قیادت میں ڈیگیانا کے علاقے میں پودے لگائے۔ فرنٹ کے چیئرمین زوراور سنگھ شہباز نے کہا کہ ہماری زندگی پودوں پر منحصر ہے ، ہمیں پودوں سے آکسیجن ، ہریالی اور خالص ماحول ملتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج کے دور میں بھی خواتین پیپل کے درخت، تلسی کے درخت کی پوجا کرتی ہیں۔ انہوں نے کہا ریشی منی درختوں کے نیچے پوجا کرتے ہی اور یہاں تک کہ گوتم بدھ نے بھی درخت کے نیچے ہی روشنی حاصل کی۔ انہوں نے کہا کہ کچھ لوگ اپنے کاروبار اور اپنے فائدے کے لیے درخت کاٹتے ہیں جو کہ بالکل غلط ہے ، انہوں نے کہا کہ ہمیں درختوں اور پودوں کی حفاظت کرنی ہے ، تاکہ فطرت محفوظ رہے۔
 
 

پکھرنی کو ماڈل ولیج بنانے کی مانگ 

رمیش کیسر 
نوشہرہ //سب ڈویژن نوشہرہ کے سرحدی علاقہ پکھرنی کے مکینوں نے جموں وکشمیر انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ سرحدی دیہا ت کو ماڈل ولیج بنایا جائے تاکہ پریشانیوں میں مبتلا مکینوں کو بنیادی سہولیات میسر ہوسکیں ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ سر حدی علاقہ ہونے کی وجہ سے ان کو ہر طرح کی بنیادی سہولیات دستیاب نہیں ہیں تاہم مقامی و ضلع انتظامیہ کی جانب سے بھی اس طرف کوئی دھیان نہیں دیا جارہا ہے ۔انہوں نے کہاکہ گزشتہ کچھ عرصہ میں نوشہرہ کے متعدد علاقوں کو ماڈل ولیج کا درجہ دیا گیا ہے لیکن پکھرنی کی عوام کی جانب سے مانگ کرنے کے باوجود بھی انتظامیہ اس جانب کوئی دھیان نہیں دے رہی ہے ۔مقامی معززین نے بتایا کہ دیہات میں پانی ،بجلی اور سڑکوں کیساتھ ساتھ دیگر بنیادی سہولیات بھی میسر نہیں ہیں ۔انہوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ جلدازجلد علاقہ کو ماڈل ولیج کا درجہ دیا جائے تاکہ ان کی مشکلات کم ہو سکیں ۔