آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت کشمیری پنڈتوں کی جلد گھرواپسی کیلئے پراُمید

 
نئی دہلی// راشٹریہ سویم سیوک سنگھ (آر ایس ایس) کے سربراہ موہن بھاگوت نے اتوار کو امید ظاہر کی کہ 1990کی دہائی میں اپنے گھروں سے بے گھر ہونے والے کشمیری پنڈت جلد ہی وادی کشمیر میں اپنے گھروں کو واپس لوٹ جائیں گے۔
 
اُنہوں نے کہا، "مجھے لگتا ہے کہ وہ دن بہت قریب ہے جب کشمیری پنڈت اپنے گھروں کو واپس آئیں گے اور میری خواہش ہے کہ وہ دن جلد آئے"۔
 
 بھاگوت نے یہاں نورے کی تقریبات کے آخری دن ویڈیو کانفرنس کے ذریعے کشمیری ہندو برادری سے خطاب کرتے ہوئے کہا، وویک اگنی ہوتری کی ہدایتکاری دی کشمیر فائلز نے کشمیری پنڈتوں اور وادی کشمیر سے 1990کی دہائی میں ان کے اخراج کی حقیقی تصویر کو ظاہر کیا ہے۔
 
وویک اگنی ہوتری کی ہدایت کاری میں دی کشمیر فائلز، جو 11مارچ کو سینما گھروں میں ریلیز ہوئی تھی، اس میں انوپم کھیر، متھن چکرورتی، پلوی جوشی، درشن کمار اور دیگر شامل ہیں۔ فلم نے ملک میں سیاسی میدان میں تیزی سے پولرائزیشن کر دی ہے۔
 
آر ایس ایس کے سربراہ نے مزید کہا، "آج، ہر ہندوستانی کشمیری پنڈتوں کے اخراج کی حقیقت کے بارے میں جانتا ہے۔ یہ وہ وقت ہے جب کشمیری پنڈتوں کو اپنے اپنے گھروں کو اس طرح واپس جانا ہوگا کہ وہ مستقبل میں دوبارہ کبھی نہ وہاں سے نہ نکلیں"۔
 
آر ایس ایس کے سربراہ نے یہ بھی کہا کہ کشمیری پنڈتوں کو اپنے وطن واپسی کا عزم کرنا چاہیے، لہٰذا حالات جلد بدل جائیں گے۔
 
ان کا کہنا تھا کہ ’کچھ اس فلم کی حمایت میں ہیں، کچھ اسے آدھا سچ قرار دے رہے ہیں، لیکن اس قوم کے عام لوگوں کا خیال ہے کہ اس تلخ سچ کو دنیا کے سامنے پیش کر کے اس فلم نے نہ صرف یہ پیش کیا ہے۔ بے گھر کشمیریوں کے درد نے ہمیں بھی ہلا کر رکھ دیا۔
 
انہوں نے مزید کہا کہ کوئی بھی کشمیری پنڈتوں کو وہاں سے جانے پر مجبور نہیں کر سکتا اور اگر کسی نے ایسا کرنے کی کوشش کی تو اسے نتائج بھگتنا ہوں گے۔