آؤ ترقی کی راہ پرایکساتھ چلیں

  جموں و کشمیر کی تعمیرنوجوانوں کے کندھوں پر ،دہشت گردی اور تشدد لعنت : منوج سنہا

 
سرینگر// لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا ہے کہایک عظیم قوم اور خوشحال جموں و کشمیر کی تعمیر کی ذمہ داری نوجوانوں کے کندھوں پر ہے ۔کشمیر یونیورسٹی کے خصوصی کنووکیشن سے خطاب کرتے ہوئے  انہوں نے کہا کہ روشن نوجوان ذہن ہی ایک پُر امن ، ترقی پسند اور خوشحال کمیونٹی بنانے کی صلاحیت رکھتے ہیں ۔ اس موقعہ پر لیفٹیننٹ گورنر نے گولڈ میڈلسٹ اور کشمیر یونیورسٹی سے فارغ التحصیل ہونے والوں کو مبارکباد دی ۔ دہشت گردی اور تشدد کو مہذب معاشرے کیلئے لعنت قرار دیتے ہوئے لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ جہاں ہمارا ملک مائیکرو سافٹ ، گوگل ، ایڈوب وغیرہ کے سی ای او پیدا کر رہا ہے دوسری طرف پڑوسی ملک ہمارے نوجوانوں کو غلط راستے پر دھکیل رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ میں دشمنوں سے گمراہ ہونے والوں پر زور دیتا ہوں کہ وہ امن ، محبت اور باہمی اعتماد کے ساتھ آگے بڑھیں اور ترقی کی راہ پر ایک ساتھ چلیں ۔ قومی تعلیمی پالیسی  اور اس شعبے میں اصلاحات پر روشنی ڈالتے ہوئے لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ نئی پالیسی طلباء کو ایسی چیزیں سیکھنے کی اجازت دیتی ہے جو اہم ہیں اور ہمیشہ بدلتی ہوئی دُنیا سے متعلق ہیں ۔ لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ اسی راستے پر کام کرتے ہوئے جامعہ کشمیر جموں و کشمیر کی علمی معیشت اور اعلیٰ تعلیم اور ہُنر کی تربیت میں ایک اہم کردار ادا کرے گی اس کے علاوہ ایک خوشحال تعلیمی نظام اور مستقبل کے ہندوستان کی خواہشات کو پورا کرے گا ۔
اُنہوں نے مزید کہا کہ کشمیر یونیورسٹی نے جدت اور اَنٹرپرینیور شپ کی ثقافت کو فروغ دینے ، ذہنی طور پر حوصلہ اَفزا ماحول پیدا کرنے اور کثیر الجہتی تحقیق کو بین الاقوامی میدان میں لے جانے کے کورسوں کو دوبارہ ترتیب دیا ہے۔اُنہوں نے کہا کہ موجودہ تعلیمی نظام مستقبل پر مبنی ہے جہاں زیادہ تر نظریات موجودہ حالات سے لئے گئے ہیں ۔ اُنہوں نے مزید کہا کہ تاریخ میں پہلی بار ہم فخر سے کہہ سکتے ہیں کہ مادی دولت اور ذہنی دولت تیزی سے اور بیک وقت ترقی کر رہی ہے۔لیفٹیننٹ گورنر نے فیکلٹی ممبران سے کہا کہ وہ تدریسی اور سیکھنے کے پہلوئوں کے درمیان توازن برقرار رکھیں تاکہ عالمی ٹیلنٹ کو پیداکیا جاسکے۔لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ تعلیمی اداروں کو نوجوان پود کے مستقبل کے لئے تیار کرنے کی خاطر ری سکلنگ ، اَپ سکلنگ اورنیو سکلنگ پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔لیفٹیننٹ گورنر نے جموں و کشمیر کے نوجوانوں کو انڈسٹری 4.0 کے لئے یو ٹی حکومت کی جانب سے کئے گئے اصلاحی اقدامات پر زور دیتے ہوئے کہا کہ آج ایجاد ، انوویشن ، انکیوبیشن اور ٹریننگ کے دو مراکز بارہمولہ اور جموں میں ڈیجیٹل انڈیا کے مشن کو تیز کرنے کے علاوہ روبوٹکس اور مصنوعی ذہانت کا فریم ورک ہمارے نوجوانوں کو نئی ٹیکنالوجی سے روشناس کررہا ہے۔اُنہوں نے کہا کہ اعلیٰ تعلیم کو یوٹی کے دو ر دراز علاقوں میں لے جانے کے لئے کشمیر یونیورسٹی نے سیٹلائٹ کیمپس قائم کئے ہیں اور اس طرح کی کوششوں کی وجہ سے اسے ملک کی اعلیٰ ترین 50 یونیورسٹیوں میں شامل کیا گیا ہے۔ لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ بین الاقوامی تعاون ، سینٹر آف ایکسی لینس اور کشمیر یونیورسٹی کے زیر اہتمام سکل سینٹر چھوٹے پنچایتوں اور قصبوں سے آنے والے نوجوانوں کو بھی سہولیت فراہم کر رہا ہے۔
اُنہوں نے نوجوانوں سے کہا کہ اب اگلے 25 برسوں کا سنہری موقعہ آپ کے سامنے آزادی کی صد سالہ تقریبات کے لئے ہے اور آپ کو قوم ترقی کی نئی بلندیوں پر لے جانے کا عزم کرنا چاہیے۔لیفٹیننٹ گورنر نے وائس چانسلر اور تمام فیکلٹی ممبران کو مبارک باد دی کہ وہ تعلیمی اِصلاحات لانے کے لئے مسلسل کوششیں کر رہے ہیں۔ وائس چانسلر کشمیر یونیورسٹی پروفیسر طلعت احمد نے خطبہ اِستقبالیہ پیش کیااور یونیورسٹی رِپورٹ پڑھ کر سنایا۔رجسٹرار کشمیر یونیورستی ڈاکٹر نثار احمد میر نے نظامت کے فرائض اَنجام دئیے اور شکریہ کی تحریک پیش کی۔اِس موقعہ پر لیفٹیننٹ گورنر نے تعلیمی میدان میں نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے طلباء کو گولڈ میڈل سے نوازا۔خصوصی کنووکیشن کے دورن 88 لڑکوں کے مقابلے میں طالبات کو مجموعی طور پر 282 طلائی تمغے دئیے گئے۔