اُتر پردیش واقعہ کے بعد صحافیوں کی حفاظت کیلئے ایس او پیز پر غور

یو این آئی
نئی دہلی// اتر پردیش کے پریاگ راج میں کل رات گینگسٹر سے سیاستدان بنے عتیق احمد اور ان کے بھائی اشرف کے قتل کا نوٹس لیتے ہوئے، وزارت داخلہ (ایم ایچ اے) نے صحافیوں کی حفاظت اور تحفظ کے لیے معیاری آپریٹنگ پروسیجر (ایس او پی) تیار کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔یہ قدم پریاگ راج میں عتیق اور اشرف کو قتل کرنے والے تین حملہ آوروں کے بعد اٹھایا جا رہا ہے، ذرائع نے بتایا کہ یہ فیصلہ وزیر داخلہ امت شاہ اور وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت میں کیا گیا ہے۔اتر پردیش پولیس نے اتوار کو کہا کہ جیل میں بند گینگسٹر اور اس کے بھائی کے حملہ آوروں نے جائے وقوعہ پر صحافیوں کا روپ دھارا۔”گولیاں چلانے والے صحافیوں کا روپ دھار رہے تھے۔ جیسے ہی عتیق چیک اپ کے لیے پہنچے تو انہیں دوسرے صحافیوں نے گھیر لیا اور عتیق اور اس کے بھائی کے قریب ہو گئے۔ ایک کے پاس کیمرہ تھا اور وہ کیمرہ مین کا روپ دھار رہا تھا۔ ایک اور مائیک لے کر گھوم رہا تھا جس پر این سی آر نیوز کے الفاظ لکھے ہوئے تھے۔ تیسرا دونوں کی مدد کر رہا تھا،‘‘۔‘‘جیسے ہی عتیق ہسپتال پہنچا، صحافیوں نے 2 لائنوں کے بعد ان سے پوچھ گچھ شروع کر دی، ایک شخص نے بہت قریب سے ان کے سر پر گولی چلائی اور عتیق نیچے گر گیا۔ دوسرے دو لڑکوں نے بھی کیمرہ اور مائیک پھینک دیا اور فائرنگ شروع کردی۔شوٹنگ جو رات 10 بجے کے قریب پیش آئی اور کیمرے میں اس وقت قید ہوگئی جب میڈیا کے لوگ ہتھکڑی والے دونوں کا پیچھا کر رہے تھے، جنہیں پولیس میڈیکل چیک اپ کے لیے ہسپتال لے جا رہی تھی۔